Post has shared content
📌 Part 25 📌
📌 نماز میں ممنوع کاموں کا بیان 📌

1⃣📌 چھینک کا جواب دینا

نماز میں باتیں کرنا

Sahih Muslim Hadees # 1099 📒

عَنْ مُعَاوِيَةَ بْنِ الْحَکَمِ السُّلَمِيِّ قَالَ بَيْنَا أَنَا أُصَلِّي مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذْ عَطَسَ رَجُلٌ مِنْ الْقَوْمِ فَقُلْتُ يَرْحَمُکَ اللَّهُ فَرَمَانِي الْقَوْمُ بِأَبْصَارِهِمْ فَقُلْتُ وَا ثُکْلَ أُمِّيَاهْ مَا شَأْنُکُمْ تَنْظُرُونَ إِلَيَّ فَجَعَلُوا يَضْرِبُونَ بِأَيْدِيهِمْ عَلَی أَفْخَاذِهِمْ فَلَمَّا رَأَيْتُهُمْ يُصَمِّتُونَنِي لَکِنِّي سَکَتُّ فَلَمَّا صَلَّی رَسُولُ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَبِأَبِي هُوَ وَأُمِّي مَا رَأَيْتُ مُعَلِّمًا قَبْلَهُ وَلَا بَعْدَهُ أَحْسَنَ تَعْلِيمًا مِنْهُ فَوَاللَّهِ مَا کَهَرَنِي وَلَا ضَرَبَنِي وَلَا شَتَمَنِي قَالَ إِنَّ هَذِهِ الصَّلَاةَ لَا يَصْلُحُ فِيهَا شَيْئٌ مِنْ کَلَامِ النَّاسِ إِنَّمَا هُوَ التَّسْبِيحُ وَالتَّکْبِيرُ وَقِرَائَةُ الْقُرْآنِ

معاویہ ابن حکم سلمی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ نماز پڑھ رہا تھا کہ اسی دوران جماعت میں سے ایک آدمی کو چھینک آئی تو میں نے (یَرحَمُکَ اللہ) کہہ دیا تو لوگوں نے مجھے گھورنا شروع کر دیا میں نے کہا کاش کہ میری ماں مجھ پر رو چکی ہوتی تم مجھے کیوں گھور رہے ہو یہ سن کر وہ لوگ اپنی رانوں پر اپنے ہاتھ مارنے لگے پھر جب میں نے دیکھا کہ وہ لوگ مجھے خاموش کرانا چاہتے ہیں تو میں خاموش ہوگیا جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز سے فارغ ہو گئے میرا باپ اور میری ماں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر قربان میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے نہ ہی آپ کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے بہتر کوئی سکھانے والا دیکھا اللہ کی قسم نہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مجھے جھڑکا اور نہ ہی مجھے مارا اور نہ ہی مجھے گالی دی پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ نماز میں لوگوں سے باتیں کرنی درست نہیں بلکہ نماز میں تو تسبیح اور تکبیر اور قرآن کی تلاوت کرنی چاہئے


2⃣📌 ہاتھ کی انگلیاں ایک دوسرے میں ڈالنا

Sunnan e Abu Dawood Hadees # 562 📓

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مُعَاذِ بْنِ عَبَّادٍ الْعَنْبَرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَعْلَى بْنِ عَطَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَعْبَدِ بْنِ هُرْمُزَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَضَرَ رَجُلًا مِنْ الْأَنْصَارِ الْمَوْتُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي مُحَدِّثُكُمْ حَدِيثًا مَا أُحَدِّثُكُمُوهُ إِلَّا احْتِسَابًا، ‏‏‏‏‏‏سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ إِذَا تَوَضَّأَ أَحَدُكُمْ فَأَحْسَنَ الْوُضُوءَ ثُمَّ خَرَجَ إِلَى الصَّلَاةِ لَمْ يَرْفَعْ قَدَمَهُ الْيُمْنَى، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا كَتَبَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ لَهُ حَسَنَةً، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يَضَعْ قَدَمَهُ الْيُسْرَى، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا حَطَّ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ عَنْهُ سَيِّئَةً، ‏‏‏‏‏‏فَلْيُقَرِّبْ أَحَدُكُمْ أَوْ لِيُبَعِّدْ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ أَتَى الْمَسْجِدَ فَصَلَّى فِي جَمَاعَةٍ غُفِرَ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ أَتَى الْمَسْجِدَ وَقَدْ صَلَّوْا بَعْضًا وَبَقِيَ بَعْضٌ صَلَّى مَا أَدْرَكَ وَأَتَمَّ مَا بَقِيَ كَانَ كَذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ أَتَى الْمَسْجِدَ وَقَدْ صَلَّوْا فَأَتَمَّ الصَّلَاةَ كَانَ كَذَلِكَ .

مجھ سے ابو ثمامہ حناط نے بیان کیا ہے کہ وہ مسجد جا رہے تھے کہ کعب بن عجرہ رضی اللہ عنہ نے انہیں راستہ میں پا لیا، تو دونوں ایک دوسرے سے ملے، وہ کہتے ہیں: انہوں نے مجھے اپنے دونوں ہاتھوں کی انگلیوں کو باہم پیوست کئے ہوئے پایا تو اس سے منع کیا اور کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے: جب تم میں سے کوئی شخص اچھی طرح وضو کرے، پھر مسجد کا ارادہ کر کے نکلے تو اپنے دونوں ہاتھوں کی انگلیوں کو ایک دوسرے میں پیوست نہ کرے، کیونکہ وہ نماز میں ہوتا ہے

3⃣📌 ہونٹ بند رکھ کر محض دل میں پڑھنا مناسب نہیں، بلکہ ہونٹ کھول کر زبان سے پڑھنا چاہیے صحابہ کرام رسول صلی الله عليه وسلم کی قراءت کا اندازہ داڑھی کی حرکت سے لگایا کرتے تھے یہ اس بات کی دلیل ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہونٹ کھول کر پڑھتے تھے

Sahih Bukhari Hadees # 760 📔

حدثنا عمر بن حفص ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا أبي قال ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثنا الأعمش ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثني عمارة ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن أبي معمر ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال سألنا خبابا أكان النبي صلى الله عليه وسلم يقرأ في الظهر والعصر قال نعم‏.‏ قلنا بأى شىء كنتم تعرفون قال باضطراب لحيته‏

کیا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ظہر اور عصر میں قرآت کیا کرتے تھے؟ تو انہوں نے بتلایا کہ ہاں، ہم نے پوچھا کہ آپ لوگوں کو کس طرح معلوم ہوتا تھا؟ فرمایا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی داڑھی مبارک کے ہلنے سے

4⃣📌 بال باندھنا اور کپڑے سمیٹنا

Sahih Bukhari Hadees # 815 📗

حدثنا أبو النعمان ،‏‏‏‏ قال حدثنا حماد ـ وهو ابن زيد ـ عن عمرو بن دينار ،‏‏‏‏ عن طاوس ،‏‏‏‏ عن ابن عباس ،‏‏‏‏ قال أمر النبي صلى الله عليه وسلم أن يسجد على سبعة أعظم ،‏‏‏‏ ولا يكف ثوبه ولا شعره‏

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو حکم تھا کہ سات ہڈیوں پر سجدہ کریں اور بال اور کپڑے نہ سمیٹیں

5⃣📌 آسمان کی طرف یا اِدھر اُدھر دیکھنا

Sahih Bukhari Hadees # 750 📓

*حدثنا علي بن عبد الله ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال أخبرنا يحيى بن سعيد ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا ابن أبي عروبة ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا قتادة ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ أن أنس بن مالك ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ حدثهم قال قال النبي صلى الله عليه وسلم ‏ ‏ ما بال أقوام يرفعون أبصارهم إلى السماء في صلاتهم ‏ ‏‏.‏ فاشتد قوله في ذلك حتى قال ‏ ‏ لينتهن عن ذلك أو لتخطفن أبصارهم*‏ ‏‏.‏

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا لوگوں کا کیا حال ہے جو نماز میں اپنی نظریں آسمان کی طرف اٹھاتے ہیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے نہایت سختی سے روکا یہاں تک آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ لوگ اس حرکت سے باز آ جائیں ورنہ ان کی بینائی اچک لی جائے گی


Sahih Bukhari Hadees # 751 📓

حدثنا مسدد ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا أبو الأحوص ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قال حدثنا أشعث بن سليم ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن أبيه ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن مسروق ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ عن عائشة ،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ قالت سألت رسول الله صلى الله عليه وسلم عن الالتفات في الصلاة فقال ‏ ‏ هو اختلاس يختلسه الشيطان من صلاة العبد

میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز میں ادھر ادھر دیکھنے کے بارے میں پوچھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یہ تو ڈاکہ ہے جو شیطان بندے کی نماز پر ڈالتا ہے

6⃣📌 دعائیں یا قراءت بلند آواز سے کرنا

Sunnan e Abu Dawood Hadees # 1332 📚

حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أُمَيَّةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ اعْتَكَفَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْمَسْجِدِ فَسَمِعَهُمْ يَجْهَرُونَ بِالْقِرَاءَةِ فَكَشَفَ السِّتْرَ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَا إِنَّ كُلَّكُمْ مُنَاجٍ رَبَّهُ فَلَا يُؤْذِيَنَّ بَعْضُكُمْ بَعْضًا، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يَرْفَعْ بَعْضُكُمْ عَلَى بَعْضٍ فِي الْقِرَاءَةِ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ قَالَ:‏‏‏‏ فِي الصَّلَاةِ

*رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد میں اعتکاف فرمایا، آپ نے لوگوں کو بلند آواز سے قرآت کرتے سنا تو پردہ ہٹایا اور فرمایا: لوگو! سنو، تم میں سے ہر ایک اپنے رب سے سرگوشی کرتا ہے، تو کوئی کسی کو ایذا نہ پہنچائے اور نہ قرآت میں(یا کہا نماز) میں اپنی آواز کو دوسرے کی آواز سے بلند کرے*
Photo

Post has shared content
هل صليت على النبي اليوم ؟

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ ، اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ

- تذكير بالصلاة على النبي
Animated Photo

Post has attachment
Wait while more posts are being loaded