Post is pinned.Post has shared content

Post has shared content
Must read till end

میں دکھائی نہیں پڑتا
مگر میں ہوں۔۔
تمہاری گلی کی نکڑ پہ کبھی رکشہ ڈرائیور بن کر کھڑا تمہارے گھروں کی حفاظت پر معمور ۔۔۔۔۔۔۔۔ تو کبھی تمہاری نوجوان اولاد کی حفاظت کے لیے کرکٹ اور ہاکی کے گراونڈز کی باونڈری لائن کے باہر کھڑا تماشائی بن کر۔۔۔۔۔۔ میں موجود ہوں۔۔۔۔۔۔ کسی مجذوب کا روپ دھارے تمہارے گھر والوں کی حفاظت کے لیے تمہارے شہر کے بازاروں میں ۔۔۔۔۔۔۔ تمہیں احساس نہیں ہوتا مگر عین موقع پر تم سے بھیک مانگ کر تمہاری جیب کٹ جانے سے بچا لیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔ شہر کے لاری اڈہ پر اخبار بیچتے ہوئے تمہارے اردگرد سے باخبر رہتا ہوں۔ مگر تم ۔۔۔۔ مجھ سے بے خبر ہو کر چلتے ہو۔۔۔۔
کسی ہسپتال میں نرسنگ سٹاف کا ممبر بن کر تمہاری جانوں کی حفاظت کرتا ہوں۔
تم دیکھتے ہو جب کبھی سگنل پر گاڑی رکتی ہے تو میں بس میں کوئی مرغ دال یا قلفی بیچنے والا بن کر چڑھ دوڑتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ تم قلفی یا دال خریدتے ہو مگر میں ۔۔۔۔۔۔۔ میں تمہیں ایک باحفاظت سفر کی ضمانت دے جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔
تمہیں پتا ہے جون جولائی کی تپتی اور لو اڑاتی دھوپ میں جب پرندے اپنے گھونسلوں میں چھپ جاتے ہیں میں امرود بیچنے والا بن کر یا پھر کباڑیا بن کر تمہاری گلیوں میں گشت کرتا ہوں۔ تاکہ شہروں کا کباڑا نہ ہو۔۔۔۔۔۔۔
جانتے ہو جنوری کی یخ راتوں میں رات کی تاریکی میں وسل بجاتا تمہاری گلیوں سے گزرنے والا اکثر تمہارے محلے کا چوکیدار نہیں بلکہ تمہارے وطن کا چوکیدار ہوتا ہے۔
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
تم جانتے ہو مجھے اپنے وطن کے علاوہ عالم اسلام کی بھی فکر رہتی ہے۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔ کبھی میں ایک مجاہد بن کر وادی کشمیر کی بہنو کے غموں کا مدوا کرنے پہنچ جاتا ہوں۔ ۔ ۔ ۔ کبھی ایک ہندو یا سکھ بن کر انڈین وزیراعظم کے پرسنل سیکیورٹی افسر کے فرائض سرانجام دیتا ہوں۔ کبھی انہی کی پارلمنٹ کا نمائندہ بن کر تمہارے جذبات کے نمائندگی کرتا ہوں۔
تم مجھے دیکھتے نہیں مگر فلسطین تک پرواز بھی میرے زمہ ہے۔ کسی صحافی کا روپ دھار کر اسرائیلی فوجیوں کی مخبریاں کرتا ہوں ۔۔ تو کبھی فلسطینی مجاہدین کو ٹرینگ دیتا ہوں۔ میرا ہی کارنامہ ہوتا ہے کہ اسرائیلی پارلیمنٹ میں اللہ اکبر اللہ اکبر کی صدا بلند کروا دیتا ہوں۔۔۔
یہ میں ہی ہوں جو روس کو سہانے خواب دیکھا کر پہلے افغانستان لاتا ہوں ۔ پھر امریکہ سے تعاون لے کر پوری دنیا کو روس کی جارہیت سے پناہ دیتا ہوں ۔ اور یہ میں ہی ہوں جو امریکہ کا دائیاں بازو بن کر امریکہ کو ہی کاٹتا ہوں۔
یہ میری ہی چابک دستی ہے کہ امریکہ 12 سال افغانستان میں ٹکریں مارتا ہے۔ اور خوب سرمایہ تباہ کرتا ہے۔ البتہ اسامہ کا ڈرامہ ایبٹ آباد میں فلاپ کروا دیتا ہوں۔
یہ میرا ہی کارنامہ ہے کہ خدمت کے نام پر بی ایل اے کے منصوبے کا کاونٹر کر کہ بلوچوں کو منا لیتا ہوں۔ اور بی ایل اے کے بدلے خالصتان جیسی تحریکیں ہندوستان میں مظبوط کر دیتا ہوں۔
تم نہیں جانتے کہ تمہارا حج میرے بغیر کتنا مشکل ہو جائے ۔ میں حرم کی پہرہ داری پہ کھڑا ہوتا ہوں تاکہ تم اپنے لیے امن کی دعا کر سکو ۔۔۔۔۔۔
میں کسی نہ کسی کور میں برما تک پہنچ جاتا ہوں ۔ تاکہ انہیں لڑنا سیکھا سکوں۔
میری لڑائی
انڈیا، امریکہ اور اسرائیل سے بھی ہے۔ اور ان کے پالتو کتوں
ٹی ٹی پی ، داعش، بی ایل اے جیسے بہت سے دہشت گردوں سے بھی ۔
مجھے ہر جگہ جانا ہوتا ہے۔ مجھے مسلم امہ کا خیال بھی رکھنا ہوتا ہے۔ اور ملت کفر کی ہر سازش پر نظر بھی ۔۔۔
میں ملک کی ہر گلی سے لے کر کفر کے ہر ایوان تک موجود ہوں ۔۔۔۔۔ میں ہر وقت مستعد ہوں ۔
مگر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم نے سوچا کہ میں اتنا کچھ کیوں کرتا ہوں۔
کیونکہ مجھے فکر ہے۔
میں نے عراق اور صومالیہ کا حال دیکھا ہے
میں نے ہیروشیما پر ایٹم گرتے دیکھا ہے۔
میں نے شام اور مصر کا حال دیکھا ہے۔
میں جانتا ہوں کہ میرے مقابل
سی آئی اے
بلیک واٹر
راء
موساد جیسے مہنگے کرائے کے قاتل ہیں ۔ جن کا مقصد ہی مجھے، میرے پاکستان کو ختم کرنا ہے۔
میں جیتا ہوں اتنے دشمنو میں ۔ غیروں کی سازشوں میں ۔۔ اپنوں کی دغابازیوں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سارے دشمن جب مل کر حملہ کرتے ہیں تو کبھی کبھار مجھے زخم لگ جاتے ہیں۔
میں وسائل تھوڑے ہونے کے باعث نہیں پہنچ سکتا اور وہ وسائل کی زیادتی کے باعث کبھی کبھار جیت جاتے ہیں ۔ میں ان کی اس جیت کو ہار میں تو نہیں بدل سکتا ۔۔ مگر اپنے رستے زخموں کے باوجود ان پر ایسی ضرب لگا دیتا ہوں کہ ان کی جیت کی خوشی مانند پڑ جائے ۔
تمہیں میری ذیادہ فتوحات میری طرح نظر نہیں آتی ۔ مگر میرے زخموں کو کریدنے تم ہمیشہ پہنچ جاتے ہو۔۔
اتنے دشمنو کے ہوتے ہوئے میں نے تمہیں برما، شام، فلسطین، کشمیر، صومالیہ ہیروشیما نہیں بننے دیا۔
میں نے خود پہ زخم کھا کر تمہارے وجود جو آج پروقار بنایا ہے۔
آج تمہیں سی پیک دیا
عالم اسلام کا سردار بنایا
تمہیں ایٹمی طاقت بنایا
کشمیر جہاد کو سہارا دیا
میں ہی ہوں جس کے دم سے تم آج امریکہ کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بات کر سکتے ہو۔ نہ صرف بات کر سکتے ہو ۔ بلکہ آنکھیں نکال سکتے ہو ۔
میں نے تمہیں پر امن حرمین الشریفین دیے
میں نے تمہیں روس کے ٹکڑے دیے
میں نے تمہیں امریکہ کی سسکیاں سنوائی
میں تمہیں انڈیا کا رونا دیکھاؤں گا۔
اور میں ہی تمہیں بیت المقدس کو یہودی سے آزاد کروا کر دوں گا۔
میں ہر جگہ ہر روپ میں ہوں۔
میں تمہیں ہر جگہ ملوں گا
میں دنیا کے ہر کونے میں موجود ہوں
کیونکہ یہ میرا فرض ہے۔
میں آئی ایس آئی ہوں
میں پاکستان ہوں
میں اسلام کا پاسبان ہوں۔
Photo

Post has shared content

Post has shared content
اس پوسٹ کا مطلب افرا تفری پهیلانا نہیں بلکہ ملک دشمنوں کی سازشوں کو بےنقاب کرنا ہے جو ہمارے اندر اور باہر
کی دنیا میں بیٹهے ڈالر وصول کر رہے ہیں، پاکستانی عوام ایسے لوگوں کی اطلاع فوراً متعلقہ اداروں کو دیں
”آزاد بلوچستان “ کی جلاوطن حکومت یورپ کے کسی ملک میں قائم کرنے کا فیصلہ ، جلد اعلان متوقع: ضیا شاہد
مانیٹرنگ ڈیسک ستمبر 15, 2017
لاہور (ویب ڈیسک ) چینل ۵ کے تجزیوں اور تبصروں پر مشتمل پروگرام ”ضیا شاہد کے ساتھ “ میں گفتگو کرتے ہوئے معروف سینئر صحافی اور تجزیہ کار ضیا شاہد نے کہا ہے کہ پاکستان کے خلاف بیرون ممالک میں سازشیں ہو رہی ہیں، متحدہ لندن اور بلوچستان کے باغیوں کا بڑے پیمانے پر اشتراک کرایا گیا ہے اور پوری دنیا میں بلوچستان کے خلاف پروپیگنڈا کیا جا رہا ہے۔ لندن میں الطاف حسین کے دفتر میں پاکستان دشمنی میں مشہور امریکی سینیٹر ملاقات کے لئے گیا۔ اس ملاقات میں خان آف قلات کے بیٹے سلمان داﺅد کو بھی بلایا گیا تھا، یہ تاثر دیا جا رہا ہے کہ متحدہ لندن اور بلوچ باغی ایک ہیں اوران دونوں کا رابطہ سینٹر امریکہ ہے۔
انہوں نے کہا کہ نیویارک اور لندن میں اس ایشوپر بڑے پیمانے پر سرگرمیاں جاری ہیں اور کروڑوں ڈالر کے فنڈز مختص کئے جا رہے ہیں۔ لندن، نیو یارک ، واشنگٹن میں آزاد بلوچستان کے نام کے دفاتر کھول دیئے گئے ہیں۔ نیویارک میں میری کتاب کی رونمائی تقریب ہوئی اس کتاب میں چونکہ ان نام نہاد لیڈروں کا کچا چٹھا کھولا گیا ہے اس لئے ان کے لوگوں نے مجھے برا بھلا کہا اور گالیاں تک بکی گئیں۔ متحدہ لندن والوں نے کہا کہ آپ ہمارے خلاف پروپیگنڈا کر رہے ہیں۔ بلوچ لیڈروں نے کہا کہ ہم جلد ایک بڑا دھماکہ کرنے والے ہیں جو آپ سن لیں گے اس بات پر میں نے نیویارک میں اپنے نمائندہ خصوصی سے رابطہ کیا تو مجھے بتایا گیا کہ 25 اگست کو حسین حقانی نے ایک سیمینار بلایا جس میں 7 بلوچ باغی لیڈروں نے تقاریر کیں۔ سیمینار کا موضوع ” آزاد بلوچستان “ تھا اس میں حکومت پاکستان اور پاک فوج کو گالیاں اور دھمکیاں دی گئیں۔ کہا گیا کہ بلوچستان میں بغاوت چل رہی ہے لیکن پاک فوج اس کی خبریں باہر نہیں آنے دے رہی خبریں کے نمائندے نے حسین حقانی سے رابطہ کیا تو حقانی نے تصدیق کی کہ دو ہفتے میں دھماکہ ہونے والاہے۔

ضیا شاہد نے کہا کہ میری اطلاع کے مطابق بلوچستان کی جلا وطن حکومت کا اعلان کیا جانے والا ہے ۔ امریکہ اس منصوبے کو مالی معاونت فراہم کر رہا ہے لاکھوں ڈالر باغی بلوچ لیڈروں پر نچھاور کر رہا ہے ۔ دنیا میں کسی جگہ بہت جلد آزاد بلوچستان کی جلا وطن حکومت قائم کرنے کا اعلان ہو گا۔امریکہ اور برطانیہ جگہ تو نہیں دیں گے تاہم وہ ان باغیوں کو مکمل سپورٹ فراہم کر رہے ہیں۔ ان باغیوں کی حمایت میں یورپ کے چند ممالک خصوصاً ہالینڈ سرفہرست ہے۔ کوشش کی جا رہی ہے کہ کچھ ممالک سے آزاد بلوچستان جلا وطن حکومت کو تسلیم کرایا جائے۔ دو سے تین ہفتے تک اس کا اعلان متوقع ہے ۔ اس وقت پاکستان کے اندرونی معاملات میں بلوچستان سب سے اہم ہے۔ دنیا میں آزاد بلوچستان کے لیے بھاری فنڈز دیئے جا رہے ہیں، برہمداغ اور حربیار ایک پیج پر ہیں، سلمان داﺅد متحدہ کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں ، امریکہ ، برطانیہ اور یورپ کے کچھ ممالک ان کے سپورٹر ہیں۔
سینئر صحافی نے مزید کہا کہ بھارت میں ”را “ کے تحت چلنے والے 3 چینلز 24 گھنٹے بلوچستان کیخلاف پروپیگنڈا کرنے میں مصروف ہیں بھارتی یو این سلامتی کونسل میں آزاد بلوچستان کے حق میں قرار داد لانے کی تیاریوں میں مصروف ہے۔ منظم سازش کے تحت اس دوران یو این کے باہر مظاہرے کرائے جائیں گے اور یو این کے اندر اور باہر شوروغوغا کیا جائے گا، اسی دن یورپ کے کچھ ممالک میں بھی مظاہرے ہوں گے تاکہ یو این او پر دباﺅ بڑھایا جائے۔ کچھ عرصہ سے کوشش جا رہی ہے کہ افغانستان، ایران ، بلوچستان کے بارڈر پر چند مربع میل علاقہ حاصل کر کے آزاد بلوچستان کا نام دیا جائے جسے ناکام بنانے پر پاک فوج کو سلیوٹ پیش کرتا ہوں جس نے ایک انچ زمین بھی ان لوگوں کو حاصل نہیں کرنے دی۔ زمین حاصل کرنے کی کوشش جارہی ہے۔

معروف تجزیہ کا رشمع جونیجو نے کہا کہ بھارت نے گزشتہ روز یو این میں ایک قرار داد پیش کی ہے، اس میں بلوچستان میں انسانی حقوق کے حوالے سے پاکستان پر الزامات لگائے گئے ہیں۔ میری اطلاع کے مطابق ابھی بلوچستان کی جلاوطن حکومت کا اعلان کرنے کیلئے ان کے پاس گراﺅنڈ نہیں ہے پاکستان کے دشمن تو اپنی سازشوں میں مصروف ہیں لیکن اپنے فارن آفس کی نااہلی اور کارکردگی دیکھ کر خون کھول اٹھتا ہے ۔ بھارت نے یو این میں قرار داد پیش کر دی لیکن فارن آفس سے ایک بیان تک نہ آیا کسی ٹی وی چینل نے اس پر بات تک نہ کی۔ جلاوطن حکومت کا اعلان اتنا آسان نہیں ہے اس کیلئے یو این کا مشن اسی مقام پر باقاعدہ جاتا ہے اور زمینی حقائق کا جائزہ لیتا ہے ۔ اس حوالے سے ہماری خوش قسمتی ہے کہ بلوچستان میں ایسے حالات نہیں ہیں باغی ٹولہ تو 2 ہزار بندے بھی اکٹھے نہیں کر سکتا ۔ اس سے پاکستان کا کیس مضبوط ہوتا ہے تاہم ہمیں آنکھیں کھولنے کی ضرورت ہے۔ پالیسیاں تبدیل کرنے انہیں بہتر بنانے کی ضرورت ہے ، بلوچستان کا اصل رخ دنیا کے سامنے لانے کی ضرورت ہے ۔

شمع جونیجو نے مزید کہابدقسمتی سے پاکستان میں حالات کا ادراک کرنے والے بہت کم ہیں کسی کو کچھ پتہ نہیں کہ باہر کے ممالک میں کیا ہو رہا ہے ۔ یو این میں بلوچستان کے حوالے سے قراردادآئی ہے کہ ابھی میں نہیں سمجھتی کہ کوئی اعلان ہو گا تاہم ہمیں دشمن سے چوکنا رہنے کی ضرورت ہے ۔ تجزیہ کار مکرم خان نے کاہ کہ بھارت پاکستان کے خلاف دنیا میں پروپیگنڈا کر دیا ہے بلوچستان کے خلاف سازشیں کرنے میں مصروف ہے اور ہماری صورتحال یہ ہے کہ دفتر خارجہ نے شتر مرغ کی طرح اپنی گردن ریت میں دبا رکھی ہے باہر ایک تنظیم فرینڈز آف بلوچستان کے نام سے قائم کی گئی ہے جو کھلے عام کام کر رہی ہے۔ پاکستانی ایجنسیوں کے خلاف پروپیگنڈا کیا جا رہا ہے کہ 1500 افراد کو مار کر لاشیں غائب کر دی گئیں ہزاروں بلوچ بے گھر کر دیئے اسی طرح کی کہانیاں باہر کے ممالک میں مشہور کی جا رہی ہیں اور ہمارا دفتر خارجہ بلی کو دیکھ کر کبوتر کی طرح آنکھیں بند کئے بیٹھا ہے ۔ لندن میں نمائندہ خبریں وجاہت علی خان نے کہا کہ امریکی سنیٹر کی الطاف حسین سے ملاقاتیں ہورہی ہیں تاہم حکومت پاکستان نے اس پر کوئی ایکشن نہیں لیا۔ سلیمان داﺅد اور متحدہ بانی کی زیادہ تر گفتگو سوشل میڈیا پر ہوئی ہے۔
Photo

Post has shared content
برطانیہ، پاکستان کے لیے انڈیا اور افغانستان سے زیادہ خطرناک ملک ۔۔۔۔۔ ؟

تصویر میں ٹویٹ کرنے والا بندہ برطانیہ کا معروف سیاسی اور سماجی کارکن ہے۔
اس شخص کی وجہ شہرت اسلام سے نفرت ہے۔ یہ برطانیہ میں اسلام مخالف تنظیم ای ڈی ایل کا سرگرم رکن رہا ہے اور آجکل یہ پیگڈا نامی اینٹی اسلام تنظیم کا سربراہ اور چیرمین ہے۔
یہ اسلام اور قرآن کے خلاف ایک گستاخانہ ویب سائیٹ بھی چلا رہا ہے۔

آپ دیکھ سکتے ہیں کہ اس نے ٹویٹ میں بلوچستان کو پاکستان کا مقبوضہ علاقہ قرار دیا ہے۔

آزاد بلوچستان کی تحریک چلانے والے بہت سے لوگ اس کے فالورز ہیں اور انہیں اسکی اسلام دشمنی سے قطعاً کوئی شکایت نہیں۔

اسکا پسندیدہ ترین "مسلمان" الطاف حسین ہے جس کے اقوال ذریں یہ کبھی کبھی شیر کر لیتا ہے ۔۔۔

یہ ایسا ہی ہے جیسے پاکستان میں بیٹھ کر کوئی شخص انگلینڈ سے سکاٹ لینڈ الگ کرنے کی تحریک چلائے۔

لیکن برطانوی حکومت اس پر خاموش ہے۔

الطاف حسین کو برطانیہ نے پناہ دے رکھی ہے جو پاکستان میں بلا مبالغہ ہزاروں لوگوں کو مروا چکا ہے۔
برطانیہ میں بیٹھ کر پاکستان کے خلاف اعلان جنگ کرچکا ہے اور پاکستان میں دہشت گردانہ کاوائیوں کے لیے را اور موساد سے اعلانیہ ہتھیار مانگتا ہے۔
بظاہر کوئی آمدن نہ ہونے کےباؤجود انگلینڈ میں شاہانہ زندگی گزار رہا ہے۔

وہ برطانیہ جہاں غلط پارکنگ کر لیں تو پولیس گھر تک آجاتی ہے الطاف حسین کے معاملے میں بلکل خاموش ہے۔

برطانیہ نے ہربیار مری اور براہمداغ بگٹی کو بھی پناہ دے رکھی ہے جو بلوچستان میں دہشت گردی کرنے والی کئی تنظمیوں کی سربراہی کر رہے ہیں۔
اس وقت بی ایل اے کی کمانڈ بھی عملاً انہی کے پاس ہے جس کو برطانیہ نے خود بھی دہشت گرد تنظیم قرار دے رکھا ہے ۔۔۔
ان دو شخصیات کی بدولت پاکستان کے سب سے بڑے صوبے میں آگ لگی ہوئی ہے۔

لیکن برطانیہ چپ ہے۔

برطانیہ داعش کو جنگجو فراہم کرنے والا ایک بڑا ملک رہا ہے۔ جہاں الماجرون کے نام سے کام کرنے والی تنظیم اس کے لیے کھلے عام بھرتیاں کرتی رہی ہے۔ اس تنظیم کو چلانے والے عمر بکری اور انجم چودھری کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ ایم ائی 6 کے ایجنٹ ہیں۔
داعش اس وقت پاکستان میں اپنے حملوں کا آغاز کر چکی ہے۔
کراچی میں چند دن پہلے نمودار ہونے والی تنظیم انصار شریعہ کے حوالے سے خبریں ہیں کو اس کو خواجہ اظہار الحسن کے قتل کا ٹاسک ایم کیو ایم لندن کی طرف سے ملا تھا۔

یہ سب برطانیہ کی ناک کے نیچے ہو رہا ہے۔

پاکستان کو مجموعی طور پر تقریبا 100 ارب ڈالر کا نقصان پہنچانے والے آصف زرداری، نواز شریف حتی کہ ڈاکٹر عاصم کی بھی آخری پناہ گاہ برطانیہ ہی ہے۔
وہ برطانیہ جہاں چند سو پاؤنڈ اکاؤنٹ میں زائد آجائیں تو مختلف ادارے پوچھ گچھ کے لیے آجاتے ہیں وہاں ان کرپٹ خاندانوں نے اربو پاؤنڈز کی جائیدایں خرید لیں لیکن ان سے کوئی سوال نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔ کیوں؟؟

پاکستان کو بدترین ملک ثابت کرکے " ملک کا نام روشن" کرنے والی ملالہ یوسف زئی اور شرمین عبید چنائے بھی اس وقت وہیں مقیم ہیں۔

ایسا کیوں ہے؟ ۔۔۔۔۔۔؟

قرآن میں پڑھا ہے کہ یہ لوگ آپس میں ایک دوسرے کے دوست ہیں اور کبھی ہمارے دوست نہیں ہوسکتے۔

جن لوگوں کو برطانیہ نے " محفوظ ٹھکانے " فراہم کر رکھے ہیں کبھی ان کے پاکستان کو پہنچائے گئے نقصانات کا حساب کتاب کیجیے شائد آپ انڈیا، امریکہ اور افغانستان کو بھول جائیں!....شاہدخان
Photo

Post has shared content
🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰

💐 پاک فوج کے نام 💐

🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰

تم ہی سے اے مجاہدو!

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،
تمہاری مشعل وفا فروگشتِ جہات ہے۔

تمہارا ذوقِ دلنشیں جبینِ کائنات ہے۔
بقا کی روشنی ہو تم، پناہ اندھیری رات ہے۔

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،

نثار جس پہ قوم ہو، ہوا کے شہسوار تم،
ہو ہر آنکھ کی روشنی، دلوں کا قرار تم،

وفا و احترامِ دیں کے دستکار تم،
جہاں میں امن و امان و خیر کی بنائے پائدار تم،

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،

زکوٰت دے اگر کوئی زیادہ، ہو تابندگی،
بکھیر دے اناج تو فصل ہو ہری بھری،

کٹیں جو چند ڈالیاں، نمود و نقل طاق کی،
کٹیں جو چند گردنیں تو قوم میں ہو زندگی،

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،
تمہاری مشعل وفا فروگشتِ جہات ہے۔

#PakArmy
🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰

💐 پاک فوج کے نام 💐

🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰💫🇵🇰

تم ہی سے اے مجاہدو!

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،
تمہاری مشعل وفا فروگشتِ جہات ہے۔

تمہارا ذوقِ دلنشیں جبینِ کائنات ہے۔
بقا کی روشنی ہو تم، پناہ اندھیری رات ہے۔

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،

نثار جس پہ قوم ہو، ہوا کے شہسوار تم،
ہو ہر آنکھ کی روشنی، دلوں کا قرار تم،

وفا و احترامِ دیں کے دستکار تم،
جہاں میں امن و امان و خیر کی بنائے پائدار تم،

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،

زکوٰت دے اگر کوئی زیادہ، ہو تابندگی،
بکھیر دے اناج تو فصل ہو ہری بھری،

کٹیں جو چند ڈالیاں، نمود و نقل طاق کی،
کٹیں جو چند گردنیں تو قوم میں ہو زندگی،

شہید کی جو موت ہے، وہ قوم کی حیات ہے۔
لہو جو ہے شہید کا، وہ قوم کی زکوٰت ہے۔

تم ہی سے اے مجاہدو، جہاں کا ثبات ہے،
تمہاری مشعل وفا فروگشتِ جہات ہے۔

#PakArmy
Photo

Post has shared content

Post has attachment
A Quaid e Azam tera shukria

Post has shared content

Post has shared content
Wait while more posts are being loaded