Ammi ko god aur Abbu k kandhy
na job ki soch, na life k pangy

na shadi ki fikar, na future k sapny
woh school k dost, woh kapry gandy

woh ghoomna phirna, woh tafreeh krna
woh her eid main kehna, abbu naye kapry

lekin...........

ab kal ki hai fikar, aur adhoory hain sapny
mur k daikho tou boht door hain apny

manzilon ko dhoondtay huway kahan kho gaye hum........?
yaar! kyun itni jaldi barray ho gaye hum...........?

Courtesy My Friend Ishtiaq

Post has attachment

Post has attachment
Photo




انسان کیا ہے ؟ دیکھنے کو تو دوسرے جانوروں جیسا ایک جانور ہے لیکن اس کو ذہن اور شعور کی دولت عطا ہوئی ہے اور اس دولت نے اسے جانوروں سے الگ کر دیا ہے ۔ اب اس کو سچ ، حق ، جمال ، اور خوب کا سامنا ہوتا ہے ۔ اس کا شعور ان کا سامنا کرتا ہے اور اپناتا ہے ۔ وہ اخلاق کا اور اخلاقی اصولوں کا پابند ہو جاتا ہے اور جب تک انسان ان چیزوں کا پابند ہے، وہ انسان ہے ۔ اور جب ان سے باہر نکل جاتا ہے تو پھر حیوان ہے ۔ اشفاق احمد بابا صاحبا صفحہ
Wait while more posts are being loaded