Post has shared content
آپ آنسو نا بہایا کیجے
آپ بس مسکرایا کیجے
آپ کاچہرہ نہیں ججتا اداس
آپ ہر غم کو بھلایا کیجے
آنکھیں جو دیکھ کے جھکاتے ہیں
آپ ایسے بھی نا شرمایا کیجے
کالی آنکھوں کا چمکنا توبہ
نین ہم سے بھی ملایا کیجے
سیاہ کرتی میں چمکتا چہرہ
آپ نا جان نکالا کیجے
رات کیوں چھوڑ چل دیے تھے آپ
پھر حضور خواب میں بھی آیا کیجے
چال ایسی کہ انداذ طاوس
اب قیامت بھی نا ڈھایا کیجے
آپ کا آنا جھٹ چلے جانا
ستم اتنا تو نا کیا کیجے
دیکھنا دور سے اور چھپ جانا
سامنے آ کے بھی ہنسا کیجے
لگ نا جائے کہیں خود ہی کی نظر
آئینہ یوں بھی نا تکا کیجے
ہیں گلابی جو پنکھڑی سے ہونٹ
ان پہ لالی لگا لیا کیجے
چاند بھی دیکھ کہ شرماتا ہے
اپنی آپ نظر اتارا کیجے
زلف دراذ کالی گھٹاوں جیسی
چوٹی ان کی نا بنایا کیجے
خوب ہے آپ کا انداذ گفاں
بحث کچھ ہم سے بھی کیا کیجے
آپ تو بھولتے نہیں ہم کو
یاد ہم کو بھی کچھ کیا کیجے

۔انعم منیر


Post has shared content
کیا محبت کے اظہار کی پہل سے فرق پڑھتا ہے؟
کس کی پہل متاثر ہو جاتی ہے
-
votes visible to Public
Poll option image
60%
لڑکی
60%
40%
لڑکا
40%

Post has shared content
-
votes visible to Public
55%
Quetta
45%
Peshawar

Post has attachment
تم مجھے سنبھال سنبھال کے رکھا کرو___
کچھ لوگ مجھے تم سے چرانے پہ تلے ہیں___
Photo

Post has attachment
Photo

اڑ جائیں گے تصویر سے رنگوں کی طرح ہم ،
ہم وقت کی ٹہنی پہ پرندوں کی طرح ہیں....

Post has attachment
رات کے اندھیروں میں
میرا اپنا سایہ بھی
مجھ سے روٹھ جاتا ہے
تم سے پھر گلہ کیسا
چاند بھی نہیں آتا
اب تو میری کھڑکی میں
وہ بھی روٹھ بیٹھا ہے
تم سے پھر گلہ کیسا
تم جو اب نہیں میرے
خواب اب سنجونا کیا
تم سے جو امیدیں تھی
ٹوٹ کے یہ کیوں بکھری
خود سے ہی سوالوں کا
یہ ہے سلسلہ کیسا
خود ہی میں جو ڈھونڈوں میں
غلطیاں ہزاروں ہی
مل اگر نہیں پائیں
پھر یہ تلخ لہجہ کیوں؟
ہاتھ جب چھڑیا تھا
تم نے بھیڑ میں مجھ سے
تنہا کر گئے مجھ کو
کس قدر اذیت کا
وہ جو اک منظر تھا
اب بھی مجھ کو دکھتا ہے
ٹہرا جو آ کے آنکھوں میں
قرب کا منظر کیسا
لگ گئی نظر یا پھر
چڑھ گیا ہے تجھ پہ رنگ
ظلم والی رسموں کا
اف ستم رواجوں کا
بیٹھ کے کنارے پہ
کر رہی تھی باتیں کیوں
تیری میں سمندر سے
وہ تو سن نہیں سکتا
پھر یہ بہری لہروں سے
تیرا تزکرہ کیسا؟
وہ جو عہد تیرے تھے
دل میں آج چبھتے ہیں
رنگ وہ محبت کے
آج کیوں تڑپتے ہیں
اشک کیوں بہاتے ہیں
تم ہی سے محبت کا
یہ ہے سلسلہ کیسا
نام بے وفا ہے پر
حکمران تم ہی ہو
ہاے کمبخت اے دل
تو بھی ہے ناداں کیسا۔۔
✏انعم منیر✏
Photo

Post has attachment
Photo

Post has attachment
Photo

Post has attachment
Photo
Wait while more posts are being loaded