Profile

Cover photo
Alemara News
109 followers|17,139 views
AboutPostsPhotosVideos

Stream

Alemara News

Shared publicly  - 
 
امارت اسلامیہ افغانستان کے نئے امیر:

ملا اختر محمد منصور حفظه الله-

#Alemaranews

 ·  Translate
1
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
عــــزم آپــریــشن، 25/07/2015 اول:

*لوگر،جنگجوؤں پر حملہ، 9 ہلاک، 2 ٹینک وگاڑی تباہ

*کابل،پولیس گاڑی تباہ، 3 ہلاک، 5 فوجی سرنڈر

*ہلمند،پولیس پر حملہ، 4 قتل، ٹینک و اسلحہ غنیمت

*روزگان میں حملے، 5 جنگجو قتل، 5 اہلکار سرنڈر

*قندہار، چیک پوسٹ پر حملہ، سات جنگجو ہلاک و زخمی

*پکتیکا، امریکی ڈرون حملہ، تین قبائلی رہنماء  شہید

*بادغیس، فوجی یونٹ پر  حملہ، تین اہلکار ہلاک

*غزنی دھماکہ سے فوجی ہلاک، تین جنگجو سرنڈر

*فراہ، ہیڈ کوارٹر اور چوکی پر حملہ، 2 جنگجو ہلاک

*جوزجان، مجاہدین نے ظالم ڈاکو  کو  مار ڈالا

*غور، جنگجوؤں پر دھماکہ، ایک شرپسند ہلاک

*بدخشان حملے پسپا، چوکی فتح، 12 اہلکار ہلاک، اسلحہ غنیمت



 ·  Translate
4
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
فراہ آپریشن، 6 اغواء کارگرفتار، 2 بچے بازیاب

صوبہ فراہ ضلع بکوا میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے اغواء کاروں کو گرفتار کرلیے۔

آمدہ رپورٹ کے مطابق جمعرات کےروز 2015-07-23 مقامی وقت کے مطابق شام ساڑھے تین بجے غازی آباد اور گرگ کے علاقے میں مجاہدین نے اغواء کاروں پر حملہ کیا، جو دو گھنٹےتک جاری رہا، جس کے نتیجے میں مجاہدین نے اللہ تعالی کی نصرت سے 6 اغواءکاروں کو گرفتار اور 2 بچوں کو بازیاب کروائے۔

ذرائع کے مطابق گرفتار ہونے والوں میں گلاب الدین، محمدجان، عبدالقیوم، عبدالخالق، عبدالحق  اور محمدعیسی شامل میں ہیں۔ جنہوں نے دو  بارہ سالہ بچوں کو اغواء کیے اور دونوں بچے ہتھکڑیوں میں بندھے ہوئے تھے۔

واضح رہے کہ گرفتار ہونے والے اغواء کاروں سے کابل انتظامیہ کی اسلحہ لائسنس اور 2 کلاشنکوفیں بھی برآمد ہوئے اور اغواء کاروں نے اعتراف کیا ہے کہ تمام جرائم میں کابل انتظامیہ کے اعلی عہدیدار ان کے ساتھ ملے ہوئے ہیں اور ساتھ ہی کئی بچوں کو تاوان نہ دینے کی خاطر شہید کیے جاچکے ہیں۔

گرفتارشدہ گان کی مقدمہ کو امارت اسلامیہ کے شرعی عدالت کے حوالے کردی گئی ہے۔


 ·  Translate
4
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
2 comments
 
I love my home
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
عــــزم آپــریــشن،24/07/2015اول:

بدخشان، مجاہدین کے حملے ، چوکی فتح، 9 ہلاک

امام صاحب،نائب سربراہ زخمی، کمانڈر سمیت 6 ہلاک

قندہارباڈرسیکورٹی کمانڈر سمیت 4 اہلکار ہلاک

شاہ جوئی و سیورئی دھماکوں سے 6 کٹھ پتلی فوجی ہلاک

قندوز، کمانڈوز پر حملہ، لڑائی، چار اہلکار ہلاک

ارغندآب،گشتی پارٹی پر حملہ، دو فوجی گاڑیاں تباہ

تخار،پولیس چیک پوسٹ پر حملہ، 2 اہلکار ہلاک

گلستان،کٹھ پتلی فوجوں پر حملہ، 3 ہلاک و زخمی

کابل،خاک جبار میں پولیس گاڑی پر دھماکہ، 2 زخمی

فراہ آپریشن، 6 اغواء کارگرفتار، 2 بچے بازیاب

سالنگ،سیکورٹی فورسز اور پولیس پر حملہ،4 ہلاک

بلخ،فوجی آفسر اور پولیس قتل،اسلحہ وموٹرسائیکل غنیمت

لغمان، فوجی کاروان پر حملے، 2ٹینک تباہ، 3 ہلاک

قندوزدھماکہ، ایگزیکٹو زخمی، تین محافظ ہلاک

فراہ اور ننگرہار میں چوکیوں پر حملہ، 2 ہلاک

غور، جنگجوؤں کی چوکی پر حملہ، 2 ہلاک، اسلحہ غنیمت

غزنی، چیک پوسٹ کمانڈر عباس قتل

قندوز، فاریاب اور ہلمند میں  19 اہلکار سرنڈر

میوند،سپیشل فورسز پر دھماکے و دھماکے، 6 ٹینک تباہ

بگرام،امریکن ایئربیس پر مجاہدین کا میزائل حملہ


 ·  Translate
3
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
لوگر، آرمی چوکی پر امریکی بمباری، 14 اہلکار ہلاک
 ·  Translate
3
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
بِسْــــــــــــــــــــــمِ اﷲِارَّحْمَنِ ارَّحِيم

🌹 السلام عليكم ورحمة الله وبركاته 🌹

الإمارة نیوز کی جانب سے آپ کو اورآپ کے تمام اہل خانہ کودل کی گہرایوں سے

"عيدمبــــــــــــــــــــارک

🌹Eid Mubarek🌹
 ·  Translate
4
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
عیدالفطر 1436ھ ق کی مناسبت سے عالیقدر امیر المومنین ملا محمد عمر مجاہد حفظہ اللہ کا پیغام
بسم الله الرحمن الرحیم
الحمد لله رب العلمین و الصلوة والسلام علی سیدالأنبیاء والمرسلین محمد وعلی آله وأصحابه أجمعین وبعد قال الله تعالی :
﴿ أُذِنَ لِلَّذِينَ يُقَاتَلُونَ بِأَنَّهُمْ ظُلِمُوا وَإِنَّ اللهَ عَلَى نَصْرِهِمْ لَقَدِيرٌ ﴾ [الحج:۳۹].
پوری امت مسلمہ ، خصوصا افغانستان کے مسلمان اور مجاہد عوام !
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ
نیک تمناوں اور دعاوں کے ساتھ عیدالفطر اور میدان جہاد کی عظیم فتوحات کی مبارکباد پیش کرتاہوں ۔ اللہ تعالی رمضان المبارک اور اس سے وابستہ تمام عبادات ، صدقات اور اعمال حسنہ قبول فرمائے ۔ آمین یارب العالمین۔
یہ فتوحات پہلے اللہ تعالی جل جلالہ کی نصرت اور پھر افغانستان کے مجاہد عوام کی بے انتہائی قربانیوں ، کوششوں اور تعاون کا نتیجہ ہے ۔ اللہ تعالی سب کو اس کا اجر عطافرمائے ۔
انتہائی شکر اور فخر کا مقام ہے کہ آج اسلام کے مبارک دین کی سعادتوں اور خوشیوں بھرے ایام کی مناسبت سے دل کی باتیں آپ سے شریک کررہاہوں ۔ یہ ایسے دن ہیں کہ جس میں مسلمان ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے ہیں ، ایک دوسرے کو عافیت کی دعائیں دیتے ہیں اور دینی اخوت کی فضا میں ایک دوسرے سے اخلاص، بھائی چارے اور ہمدردی کا اظہار کرکے مہربانیوں اور شفقتوں کا سلوک کرتے ہیں ۔
فرصت کو موقع غنیمت سمجھ کر امارت اسلامی افغانستان کے رواں جہاد اور مزاحمت کے ماضی اور حال کی مناسبت سے کچھ وضاحتیں آپ سے شریک کرنا چاہوں گا:
1- امریکا کی قیادت میں جارحیت پسند اتحادیوں کی جانب سے افغانستان پر جارحیت امت مسلمہ کے ایک حصے پر تمام انسانی اقدار کے خلاف ایک صریح اور ظالمانہ تجاوز تھا ۔ جس کے خلاف شرعا مقدس جہاد فرض عین ہوگیا ۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے :﴿ وَقَاتِلُواْ فِي سَبِيلِ اللّهِ الَّذِينَ يُقَاتِلُونَكُمْ... ﴾ [البقرة:۱۹۰].
ترجمہ : اور لڑو اللہ کی راہ میں ان لوگوں سے جو تم سے لڑتے ہیں ۔
انہیں دینی ہدایات کو دیکھتے ہوئے امریکی جارحیت کے حوالے سے ملک کے ڈیڑھ ہزار سے زائد علماء کرام نے امارت اسلامیہ کو جہاد کا فتوی دیا اور پوری دنیا کے علماء حق نے اس کی تائید کی ۔ اسی فتوی کی بنیاد پر جس طرح جارحیت کے آغاز میں ہم نے جہادی فریضہ پورا کیا آج بھی اسی طرح جہاد فرض عین ہے ۔ کیوں کہ ہمارے ملک پر جارحیت کی گئی ہے اور جارحیت زمین اور فضا پر مسلط ہے ۔ ماضی کی بنسبت صرف اتنا فرق آگیا ہے کہ بیرونی جارحیت پسندوں نے بھاری جانی ومالی نقصانات دیکھنے کے بعد اپنی تعداد کم کردی ہے اور خود کو محفوظ کرکے بڑے مراکز تک محدود کردیا ہے ۔ اور اس کی جگہ ہمارے معاشرے کے چند بے باک وآوارہ ، بیرونی ایجنسیوں کے تربیت یافتہ اجرتی قاتلوں اور ناسمجھ نوجوانوں کو افغان سیکیورٹی فورسز کے نام پر جنگ کے میدان میں اتاردیا ہے ۔ جس کی مالی اعانت ، تربیت اور دباو کے وقت باقاعدہ کمک پھر بھی جارح قوتیں ہی کرتی ہیں ۔ لہذا ہم اب بھی ماضی کی طرح ملک کی آزادی اور اسلامی نظام کی حاکمیت کے لیے مقدس جہاد کے مکلف ہیں ۔
یہ بات ٹھیک ہے کہ ملک کے بہت سے وسیع علاقے مجاہدین نے فتح کردیے ہیں مگر ہماری یہ جہادی مزاحمت اس وقت تک جاری رہے گی جب تک ہماراملک مکمل طورپر کفری جارحیت سے پاک ہوگا اور یہاں اسلامی نظام کی مکمل حاکمیت ہوگی ۔
2 – مسلح جہاد کے ساتھ ساتھ سیاسی سرگرمی اور مصالحتی تدابیر سے اپنے مقدس اہداف تک رسائی ایک شرعی امر اور نبوی سیاست کا اہم حصہ ہے ۔ ہمارے مبارک پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم نے جس طرح بدر اور خیبر کے میدانوں میں کفار سے جنگیں لڑی ہیں اس کے ساتھ ساتھ مسلمانوں کے مفادات کی خاطر معاہدے بھی کیے ، کفار کے نمائندوں سے مذاکرات کیے ، پیغامات اور سفیر بھیجے حتی کے مختلف مواقع پرحربی کفار کے ساتھ آمنے سامنے بات چیت کی سیاست بھی کی ۔ اگر ہم شرعی ہدایات کو پوری دقت نظر سے دیکھیں تو ہمیں نظر آتا ہے کہ دشمن سے ملاقاتیں یا کچھ مواقع پر مصالحتی تعامل منع نہیں ہے ۔ بلکہ منع یہ ہے کہ اسلام کے بلند موقف سے تنزل کیا جائے اور شرعی اوامر پامال کردیے جائیں ۔ ہم سیاسی سرگرمیاں اور دنیا کے مختلف ممالک یا افغانوں سے رابطے اور ملاقاتیں اس لیے کررہے ہیں کہ جارحیت اختتام کو پہنچے اور ایک آزاد و خود مختار اسلامی نظام ملک پر حاکم ہوجائے اور یہ ہمارا شرعی حق ہے کہ ہم تمام شرعی طریقوں کا استعمال کریں ۔ کیوں کہ ہماری منظم اور ذمہ دار انتظامیہ کے پیچھے پوری قوم موجود ہے ۔ ہم انسانی معاشرے میں رہتے ہیں ، ایک دوسرے کا احتیاج رکھتے ہیں ۔ مجاہدین اور پوری قوم کو مطمئن رہنا چاہیے کہ اس سلسلے میں اپنے شرعی موقف کا ہر میدان میں پوری قوت سے دفاع کروں گا ۔ سیاسی سرگرمیوں کے لیے سیاسی دفتر بنادیا ہے ، ہر طرح کے سیاسی معاملات آگے بڑھانے کی ذمہ داری انہیں کے ذمہ ڈالدی گئی ہے ۔
3- ہم افغانستان میں جہادی صف کے ایک ہونے پر اصرار کرتے ہیں ، اس لیے کہ ایک تو یہ الہی حکم ہے اور دوسرا یہ کہ گروپوں کی کثرت کی وجہ سے سوویت جارحیت کے خلاف گذشتہ جیتی ہوئی جنگ کی کامیابی اپنے ہاتھ سے نکلتی ہوئی ہم دیکھ چکے ہیں ۔
اللہ تعالی نے جہادی صف کے اتحاد کے متعلق فرمایا :
( إِنَّ اللَّهَ يُحِبُّ الَّذِينَ يُقَاتِلُونَ فِي سَبِيلِهِ صَفّاً كَأَنَّهُم بُنيَانٌ مَّرْصُوصٌ (4) الصف.
ترجمہ : بے شک اللہ تعالی ان لوگوں سے محبت کرتا ہے جو اس کی راہ میں سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح متحد اور منظم ہوکر لڑیں ۔ اور دوسری جگہ نص صریح سے مسلمانوں کو تنازع ، تفرقہ بازی اور آپس کے اختلاف سے منع کیا گیا ہے اور ان سے کہا گیا ہے : ( وَأَطِيعُوا اللَّهَ وَرَسُولَهُ وَلَا تَنَازَعُوا فَتَفْشَلُوا وَتَذْهَبَ رِيحُكُمْ ۖ وَاصْبِرُوا ۚ إِنَّ اللَّهَ مَعَ الصَّابِرِينَ (46) الانفال .
ترجمہ : اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو ، آپس میں جھگڑا مت کرو ورنہ آپ میں کمزوری پیدا ہوجائے گی ، طاقت اور قوت ختم ہوجائے گی ، صبر سے کام لو ، بے شک اللہ تعالی صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے ۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے : {لاَ يُلْدَغُ الْمُؤْمِنُ مِنْ جُحْرٍ وَاحِدٍ مَرَّتَيْنِ} رواه البخاري.
ترجمہ : مومن ایک غار سے دوبار نہیں ڈسا جاتا۔
لہذا ہمارے ملک میں جہادی صف کو متحد رکھنا ایک شرعی فریضہ ہے ۔ اس لیے ہم نے تمام مجاہدین کو حکم دے دیا ہے کہ اپنا اتحاد مضبوط رکھیں اور جو لوگ اختلاف کرتے ہیں ، جہادی صف خراب کرتے ہیں یا مجاہدین کو منتشر کرنے کی کوشش کرتے ہیں ان کا راستہ سختی سے روکیں ۔
4 – رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے : ( الْمُسْلِمُ أَخُو الْمُسْلِمِ لَا يَظْلِمُهُ وَلَا يَخْذُلُهُ وَلَا يَحْقِرُهُ التَّقْوَى هَاهُنَا” وَيُشِيرُ إِلَى صَدْرِهِ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ، “بِحَسْبِ امْرِئٍ مِن الشَّرِّ أَنْ يَحْقِرَ أَخَاهُ الْمُسْلِمَ كُلُّ الْمُسْلِمِ عَلَى الْمُسْلِمِ حَرَامٌ دَمُهُ وَمَالُهُ وَعِرْضُهُ ) رواه مسلم و احمد .
ترجمہ: مسلمان مسلمان کا بھائی ہے ، نہ اس پر ظلم کرتا ہے ، نہ اس کی مدد سے پیچھے ہٹتا ہے ، نہ اسے ذلیل کرتا ہے نہ اس کی تحقیر کرتا ہے ، تقوی یہاں پر ہے ، اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تین بار اپنے سینہ مبارک کی جانب اشارہ کیا ، مسلمان کے لیے یہی گناہ کافی ہے کہ وہ اپنے مسلمان کو ذلت کی نگاہ سے دیکھے ، ہر مسلمان کا خون ، مال اور عزت دوسرے مسلمان پر حرام ہے ۔
مذکورہ بالا ارشاد نبوی کو مد نظر رکھتے ہوئے ہم اسلامی معاشرے کے رکن کی حیثیت سے ہر مسلمان کو بھائی کی نگاہ سے دیکھتے ہیں ۔ اور اقلیتوں سمیت تمام افغانوں کے شرعی حقوق کو ایک دینی ذمہ داری کی حیثیت سے جانتے ہیں ۔ امارت اسلامی کی تشکیلات میں ملک کے تمام حصوں اور تمام لسانی طبقات سے صالح اور سمجھدار لوگ شریک ہیں ، جوگذشتہ 36 سالہ تجربات اور پھر آخری بیس سالوں کی ذمہ داریوں سے بہت کچھ حاصل کرچکے ہیں ۔ لہذا کوئی اس تشویش کا شکار نہ ہو کہ اگر امارت اسلامی کی حکومت آگئی تو کیا ہوگا ۔ میں آپ سب کو اطمینان دلاتاہوں کہ آنے والا انقلاب ایسا نہیں ہوگا جس طرح کمیونسٹ حکومت کے خاتمے سے سب کچھ ختم ہوکر رہ گیا تھا ۔اس دور کی طرح آج کے جہادی صف میں اختلافات نہیں ہیں ۔ اس بار ملک کے ہر شعبے میں ہونے والی شرعی اور قانونی ترقی کو برقرار رکھا جائے گا ۔ قومی دولت اور عوام کی ذاتی جائیدادوں اور املاک کی حفاظت کی جائے گی اور سب کو اپنی جائیدادوں پر بحال رکھا جائے ۔ تمام اقوام اور شخصیات کی حیثیت کو احترام دیا جائے گا۔ افغانوں کی دینی اور دنیوی ضروریات کو سامنے رکھتے ہوئے ایک جوابدہ ، شفاف ، پیشہ ورانہ مہارتوں سے لیس اور تمام افغانوں کی نمائندگی کو شامل حکومت قائم کی جائے گی ۔ ہماری کوشش ہے کہ تمام پڑوسی اور عالمی ممالک کے ساتھ اسلامی اصولوں اور قومی مفادات کی روشنی میں دوطرفہ تعلقات قائم کریں اور افغانستان کو غیروں کے شر اور داخلی اختلافات سے نجات دلادیں ۔
5- کچھ حلقے مجاہدین پر الزام لگاتے ہیں کہ یہ پاکستان اور ایران کے لوگ ہیں ۔ ان کے یہ خیالات اور الزامات انتہائی ظالمانہ اور خلاف حقیقت ہیں ۔ کیوں کہ ہماری گذشتہ تاریخ اور رواں صورتحال ان دعووں کی تصدیق نہیں کرتی ، اور آئندہ کی تاریخ بھی اس تہمت کے خلاف گواہی دے گی ، ان شاء اللہ۔
ہاں یہ حقیقت ہے کہ ہم نے ہمیشہ پاکستان ، ایران بلکہ تمام پڑوسی ممالک کے ساتھ بہتر تعلقات چاہے ہیں ، پاکستانی اور ایرانی عوام کی طرح دیگر پڑوسی ممالک ، خطے اور عالمی اقوام کی ہمیشہ سے بھلا چاہی ہے اور اب بھی چاہتے ہیں ۔ یہ ہماری طے شدہ پالیسی ہے جو سب کے مفاد میں ہے ۔
اس حوالے سے اصحاب دانش سے میرا مطالبہ ہے کہ دشمن کے انٹیلی جنس اداروں کے اس نامعقول پروپیگنڈے کا شکار نہ ہوں ، اپنے عظیم قابل فخر کارنامے غیروں سے منسوب نہ کریں ۔ اتنی بڑی جنگ جس نے بدخشان سے قندہار، فاریاب سے پکتیا اور ہرات سے ننگرہار تک پورے ملک کو اپنی آغوش میں لے لیا ہے یہ غیروں کی مدد سے لڑنا ممکن ہوتا یا بیرونی امداد کوئی اثر دکھاتی تو اس سے کابل انتظامیہ کے درد کو کوئی چارہ ضرور ملتا جس کے گرد پچاس ممالک کا حصار قائم ہے ۔ اسلحہ سے لے کر افرادی قوت تک سب کچھ انہیں باہر سے ملتا ہے ، یہاں تک کہ ان کے رہنماوں کی بھی پرورش اور تربیت وہیں ہوئی ہے ۔ مگر یہ سب کچھ ان کے قدم نہ جماسکی ، اور آئے دن علاقے ان کے ہاتھوں سے نکلے جارہے ہیں ۔ ہمارے ساتھ اللہ تعالی کی مدد ، مومن عوام کا تعاون اور جہادی روحانیات اور جذبہ شامل حال نہ ہوتا تو کیا یہ ممکن تھا کہ یہ غیر متوازن جنگ دنیا کی بڑی عسکری قوتوں کے خلاف ایک یا دو ممالک کی خفیہ اورجزئی تعاون کی زور پر چودہ سال تک لڑی جاتی ؟ یقین کریں عقل سلیم اسے تسلیم نہیں کرتی ۔
اس لیے مسلمان بھائی چاہے وہ ہم سے دور ہوں یاقریب ، دشمن کے پروپیگنڈے کا شکار نہ ہوں ، دشمن انتہائی مکار اور چالاک ہےجو مسلمانوں اور اسلامی تحریک کے خلاف اپنا پروپیگنڈہ بہت مہارت سے عام لوگوں تک پہنچاتا ہے ۔ مگر مسلمانوں ہوشیار اور اپنی ایمانی فراست سے لیس رہیں ۔
6۔ کچھ لوگ انتہائی غلط طورپر اور بلا کسی قابل ذکر دلیل کے امارت اسلامیہ کو نئی ترقی ، عصری علوم اور وسائل کا مخالف سمجھتے ہیں ۔ حالانکہ امارت اسلامی کے دور حکومت میں عصری سکولوں اور اعلی تعلیم کے حصول کے اداروں کی تعداد اور مصارف دینی مدارس سے زیادہ تھے ۔ ملک کا بیس فیصد بجٹ سالانہ تعلیم کے لیے مختص تھا۔ ہمارے دینی علماء عصری علوم کی سیکھنے کی سفارش اور حمایت اس لیے کرتے ہیں کہ اسلام نے اسے ضروری قرار دیا ہے ۔ اللہ تعالی کا پاک ارشاد ہے :
( وَأَعِدُّوا لَهُمْ مَا اسْتَطَعْتُمْ مِنْ قُوَّةٍ وَمِنْ رِبَاطِ الْخَيْلِ تُرْهِبُونَ بِهِ عَدُوَّ اللَّهِ وَعَدُوَّكُمْ... ) الانفال ۶۰
ترجمہ : اور تیار کرو ان کے لیے اپنی بساط کے مطابق قوت ، اور گھوڑے ، جس سے تم ہیبت ڈالو اللہ کے دشمنوں پر اور اپنے دشمنوں پر ۔
مذکورہ بالا ارشاد مبارکہ کے مطابق جس میں اللہ تعالی فرمارہے ہیں تیاری کرو ، تو موجودہ دور میں جہاد ایک اہم فریضہ ہے ۔ وہ اسباب جس سے دشمن کو اچھی طرح سے مارا جاتا ہے وہ عصری تعلیم اور نئے تجربات کے بغیر حاصل نہیں ہوسکتا ۔ اور نہ اس کا استعمال اس کے بغیر ممکن ہے ۔ اسی طرح مجاہدین زخمیوں اورعام مسلمانوں کا علاج معالجہ اور عام زندگی کے مختلف فنی ، تیکنیکی ، صنعتی ، زراعتی اور دیگر شعبوں میں دشمن کے احتیاج سے خلاصی معاصر دور میں مسلمانوں کی صحیح خدمت ہے اور اسلامی معاشرے کوخود کفیل بنانا عصری علوم کے بغیر ممکن نہیں ہے ۔ ہماری فقہ کا تسلیم شدہ قاعدہ ہے کہ " ما لا يتم الواجب إلا به فهو واجب، جس کے بغیر واجب کی تکمیل نہ ہو وہ واجب ہے "۔ لہذا امارت اسلامی شریعت مقدسہ کی روشنی میں عصری علوم اور وسائل کی اہمیت کی قائل ہے اور اس پر اصرار کرتی ہے ۔ اسی لیے مجاہدین وطن عزیز میں نئی نسل کی دینی اور عصری تعلیم کے لیے اپنے علاقوں میں ممکنہ وسائل مہیا کریں ۔
7- مجاہدین کو ایک بارپھر یہ بات بتادینا چاہتا ہوں کہ دو باتوں پر اگر عمل کروگے تو آخری فتح تمھاری ہوگی ، ایک یہ کہ اپنے تمام اعمال میں اللہ کی رضا مدنظر رکھو ، دین ، وطن ، امارت اور اپنی قیادت کے ساتھ مخلص اور وفادار رہو یہی دینی ہدایت ہے ۔ اللہ تعالی کا ارشاد ہے : ( يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِن تَنصُرُواْ اللَّهَ یَنصُرْکمْ وَ یُثَبِّتْ أَقْدَامَکمْ.) محمد ۷
ترجمہ: اے ایمان والو اگر تم اللہ )کے دین( کی مدد کروگے تو )اللہ( تمھاری مدد کرے گااور تمھارے قدم مضبوط کرے گا۔
دوسری بات یہ کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے :( لَيْسَ مِنَّا مَنْ لَمْ يَرْحَمْ صَغِيرَنَا وَلم يُوَقِّرْ كَبِيرَنَا )... ترمذي.
ترجمہ:وہ ہم میں سے نہیں جو چھوٹوں پر رحم نہ کرے اور بڑوں کی عزت نہ کرے ، یعنی وہ امت محمدیہ میں سے نہیں ہے اور حضور صلی اللہ علیہ وسلم اس سے برات کا اعلان کررہے ہیں ۔
اپنے عوام سے نرمی ، محبت اور خلوص سے پیش آو، بڑوں کووالدین اور چھوٹوں کو بھائیوں اور بچوں کی نگاہ سے دیکھو۔ عام لوگوں کے جان ومال کی حفاظت آپ کا اسلامی اور انسانی فریضہ ہے ۔ خصوصا اپنے عسکری منصوبوں میں عوامی نقصانات کی روک تھام پر توجہ دیں ۔ اگر آپ تاریخ کا مطالعہ کریں گے تو آپ کو معلوم ہوگا کہ جن لوگوں نے اللہ کے دین سے خیانت کی ، مومن مجاہد عوام کو ذلت کی نگاہ سے دیکھا اور اسلامی اخلاق کو پامال کیا ہے ان کو یہاں کبھی قدم جمانے کا موقع نہیں مل سکا ، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے: ( أکمل المؤمنين إيماناً أحسنهم خلقاً ) رواه ابوداود
ترجمہ: مسلمانوں میں کامل ایمان والا شخص وہ ہے جس کے اخلاق سب سے بہتر ہوں ۔
اس لیے عوام کے دل اچھے اخلاق سے جیتو۔
8 ۔ مجاہدین بھائیو ! ابھی جب اللہ تعالی نے فتوحات کے دروازے تم پر کھول دیے ہیں تو کوشش کرو کہ مخالف صف کے لوگوں کودعوت کے ذریعے باطل راہ سے نجات دلاو۔ ان کو حفاظت اور باعزت زندگی کے راستے مہیا کرو۔ انہیں مارنے کی بجائے ان کی اصلاح سے خوش ہو ، کیوں کہ ان کے خاندانوں اور یتیموں سے ہمارے معاشرے میں دکھ اور بڑھے گا۔ ان کی کفالت بھی تمھارے ہی ذمہ ہوجائے گی ۔ اللہ تعالی نے ان لوگوں کی تعریف کی ہے جو غصہ کو برداشت اور عفو کرتے ہیں: ( وَالْكَاظِمِينَ الْغَيْظَ وَالْعَافِينَ عَنِ النَّاسِ ۗ وَاللَّهُ يُحِبُّ الْمُحْسِنِينَ)‌ آل عمران (134)
ترجمہ: اور )اللہ سے ڈرنے والے لوگ( غصہ پی جانے والے اور لوگوں کو معاف کرنے والے ہیں ، اللہ تعالی ایسے نیک لوگوں کو پسند کرتا ہے ۔
9 ۔ پوری دنیا خصوصا افغانستان کے لوگوں سے اپیل کرتا ہوں کہ فتوحات کے اس شروع ہونے والے سلسلے میں جس طرح گذشتہ 14 سال تک جان ومال سے مجاہدین کی مدد کی ، اب پہلے سے بھی زیادہ ان کی مدد اور ان کا تعاون کریں ۔ اس بات پر تمھاری توجہ رہے کہ جہاد ہم میں سے ہر شخص پر فرض عین ہے ۔ اگر کوئی شخص خود جہادی محاذ پر نہیں جاسکتا وہ ایک مجاہد کی تیاری اور جہادی صفوں کے ساتھ مالی ، سیاسی اور ثقافتی وابلاغی طریقوں سے تعاون کرکے جہادی فریضہ ادا کرسکتا ہے ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے : ( مَنْ جَهَّزَ غَازِياً فِي سَبِيلِ الله فَقَدْ غَزَا، وَمَنْ خَلَفَ غَازِياً فِي سَبِيلِ الله بِخَيْرٍ فَقَدْ غَزَا ) متفق علیه
ترجمہ : جس نے اللہ کی راہ کے مجاہد کو وسائل تیار کرکے دیے اس نے جہاد کیا اور جس نے کسی مجاہد کے گھر کی اچھی کفالت کی بے شک اس نے جہاد کیا ۔
10۔ آخر میں اسلامی ممالک کےرہنماوں اور عام مسلمانوں سے امید رکھتا ہوں کہ آپس میں بھائی چارہ اور اتفاق پیدا کریں ۔ اپنے آپس کے اختلافات سے اپنی صف کمزور نہ کریں ۔ برداشت ، حوصلہ ، تدبر اور اسلامی شریعت کی پابندی کی سیاست اختیار کریں ۔ اور تمام صاحب ثروت مسلمانوں سے امید رکھتا ہوں کہ عید کی خوشیوں میں شہداء ، اسیروں ، معذوروں ، غریبوں اور محاذوں پر بر سرپیکار غازیوں کے خاندانوں سے ہمہ پہلو تعاون کریں ۔ عید کی خوشیوں میں انہیں اپنے ساتھ شریک کریں ۔ ان کی حوصلہ افزائی کریں ۔ اور اس طرح دنیا و آخرت کی کامیابی حاصل کریں ۔ اپنی طرح غیروں کے بھی خیر خواہ رہو کیوں کہ یہی خیر اندیشی فلاح اور کامیابی کا راستہ ہے : ( وَافْعَلُوا الْخَيْرَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ) الحج – ۷۷
ترجمہ : اور نیک کام) اچھے اخلاق اور صلہ رحمی( کرو تاکہ فلاح پاو۔
ایک بارپھر تمام مسلمانوں کو عید مبارک ، اللہ تمھاری عبادتیں قبول فرمائے ۔
واالسلام
خادم اسلام امیرالمؤمنین ملا محمد عمر مجاہد
۲۷ رمضان المبارک ۱۴۳۶ ه ق
2015/7/14 م

 ·  Translate
5
3
Faraz Khan's profile photoShahamat Movies's profile photo
Add a comment...
Have him in circles
109 people
Al Hikmat's profile photo
said vegatecno's profile photo
Wazer Wazer's profile photo
fazaldeen ihsan's profile photo
‫خالدبن ولید آپریشن‬‎'s profile photo
Alkhidmat Sindh's profile photo
Qari Luqman's profile photo
‫باقية رغم الصعاب‬‎'s profile photo
‫عجب خان رحمتي وردگ‬‎'s profile photo

Alemara News

Shared publicly  - 
 
عالیقدر امیرالمؤمنین ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ کے اعلان وفات کے متعلق امارت اسلامیہ رہبری شوری اور مرحوم کے خاندان کا اعلامیہ

إن الحمد لله؛ نحمده، ونستعينه، ونستغفره، ونتوب إليه، ونعوذ بالله من شرور أنفسنا ومن سيئات أعمالنا، من يهده الله؛ فلا مضل له، ومن يضلل؛ فلا هادي له. ونشهد أن لا إله إلا الله وحده لا شريك له، ونشهد أن محمداً عبده ورسوله، صلى الله عليه وعلى آله وأصحابه وسلم تسليماًکثیرا.

أما بعد. فقد قال الله تبارک و تعالی:

وَمَا كَانَ لِنَفْسٍ أَنْ تَمُوتَ إِلاَّ بِإِذْنِ الله كِتَابًا مُّؤَجَّلاً وَمَن يُرِدْ ثَوَابَ الدُّنْيَا نُؤْتِهِ مِنْهَا وَمَن يُرِدْ ثَوَابَ الآخِرَةِ نُؤْتِهِ مِنْهَا وَسَنَجْزِي الشَّاكِرِينَ۱۴۵وَكَأَيِّن مِّن نَّبِيٍّ قَاتَلَ مَعَهُ رِبِّيُّونَ كَثِيرٌ فَمَا وَهَنُواْ لِمَا أَصَابَهُمْ فِي سَبِيلِ اللّهِ وَمَا ضَعُفُواْ وَمَا اسْتَكَانُواْ وَاللّهُ يُحِبُّ الصَّابِرِينَ۱۴۶وَمَا كَانَ قَوْلَهُمْ إِلاَّ أَن قَالُواْ ربَّنَا اغْفِرْ لَنَا ذُنُوبَنَا وَإِسْرَافَنَا فِي أَمْرِنَا وَثَبِّتْ أَقْدَامَنَا وانصُرْنَا عَلَى الْقَوْمِ الْكَافِرِينَ ۱۴۷ آل عمران.

ترجمہ : اور کسی کو موت آنا ممکن ہی نہیں بغیر اللہ کے حکم کے ، اس طرح کہ موت کا وقت معین ہے، اور جو دنیوی نتیجہ چاہتا ہے تو ہم اس کو دنیا کا حصہ دے دیتے ہیں، اور جو اخروی حصہ چاہتا ہے، تو ہم اس کو آخرت کا حصہ دینگے، اور ہم بہت جلد شکر گزاروں کو بدلہ دیں گے۔

اور بہت نبی ہوچکے ہیں جن کے ساتھ ہوکر بہت سے اللہ والے لڑے ہی۔ سو نہ تو انہوں نے ہمت ہاری ان مصائب کی وجہ سے جو ان پر اللہ کی راہ میں پیش آئے، نہ ان کا زور گھٹا، اور نہ وہ دبے، اور اللہ تو صبروالوں کو محبوب رکھتا ہے۔

اور ان کے زبان سے بھی تو اس کے سوا اور کچھ نہ نکلا کہ انہوں نے کہا ، اے ہمارے رب! آپ ہمارے گناہوں کو اور مہارے کاموں میں اپنی حد سے نکل جانے کو بخش دیجیے، اور ہم کو ثابت قدم رکھئے، اور ہم کو کافروں پر غالب کیجیے۔

موت حق ہے،ہمارا اس پر ایمان ہے ،کہ اللہ تعالی کے سوا ہر موجود کو موت کا سامنا ہوتا ہے،حتی اللہ تعالی کے سب سے محبوب مخلوق اور دونوں جہان کے سردار حضرت رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بھی موت کا ذائقہ چکھا ہے اور دنیا سے رحلت فرمایا ہے۔

اسی حقیقت کو مدنظر رکھتے ہوئے امارت اسلامیہ افغانستان کے قائد اور ملامحمد عمر مجاہد کا خاندان اعلان کرتے ہیں، کہ امارت اسلامیہ کے بانی اور زعیم امیرالمؤمنین ملا محمدعمر مجاہد طویل علالت کے بعد خالق حقیقی سے جاملے اور اس دنیا سے ابدی زندگی کی جانب رحلت سفر باندھے۔ اناللہ وانآ الیہ راجعون ورحمۃ اللہ تعالی رحمۃ واسعۃ

ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ علیہ امت اسلامیہ کے مایہ ناز اور مخلص رہبر تھے، جنہوں نے شدید شرائط کے دوران اسلامی حاکمیت کے سرنگون پرچم کو بلند کیا، امارت اسلامیہ کے نام سے ایک مکمل منظم اور اسلامی سیاست کے اصولوں پر مبنی شرعی نظام تاسیس کی، اللہ تعالی نے ان کے ذریعے نہ صرف افغانستان کےسطح پر مؤمنوں کو اسلامی نظام کے نعمت سے نوازا، بلکہ دنیا کو واقعی اسلامی حاکمیت کا نمونہ پیش کیا۔

یہ چند سطور ممکن موصوف کے مایہ ناز کارناموں کے احتوا کو برداشت نہیں کرسکےگی، تو اسی لیے اصل موضوع کی جانب آتے ہیں، وہ یہ کہ عالی قدر امیرالمؤمنین رحمۃاللہ نے اس سے دنیا سے رحلت فرمایا ہے، ان شرائط میں ہماری ذمہ داری یہ ہے کہ ان سے رہ جانے والے امانت امارت اسلامیہ کو اسی طرح منظم رکھے،جس طرح مرحوم امیرالمؤمنین نے منظم رکھا تھا، ایسےہی مخلص اور اللہ تعالی پر متوکل رہے، اسی طرح قربانی کے لیے آمادہ اور راہ حق میں مؤمن، متعہد، متوکل،صابر، ثابت اور اللہ تعالی کا خوف دل میں رکھے، تاکہ اللہ تعالی اس عظیم بوجھ کو اٹھانے اور منزل تک پہنچانے کی توفیق عطافرمائیں اور ایسا ہی ہمیں دنیا اور آخرت کی سربلندی اور کامیابی سے نوازیں۔

مرحوم ملا محمد عمر مجاہد جو امریکی قیادت میں عالمی کفری حارحیت کے تمام دباؤ اور جستجو کیساتھ ساتھ ملک میں رہائش پدیز تھے اور گذشتہ چودہ برس کے دوران حتی ایک دن کے لیے افغانستان سے بیرون پاکستان یا کسی اور ملک نہیں گئے اور اپنی قیام گاہ سے امارت اسلامیہ کے امور کی رہبری کرتے رہے،کہ موصوف کے اس عظیم استقامت اور ملک سے باہر نہ جانے کے متعلق ٹھوس شواہد اور دلائل موجود ہیں، چند عرصہ قبل شدید علالت کے بعد انتقال فرماگئے۔

عالی قدر امیرالمؤمنین جسما ایک شخص تھے، لیکن معنوی لحاظ سے موصوف ایک تحریک، ایک نظریہ اور ایک مقدس ارمان کے حامل تھے، اگر کوئی ان کے روح کو خوش اور ان سے وفاداری کا ثبوت پیش کریں، تو انہیں چاہیے ان کے میراث امارت اسلامیہ سے وفا کریں، اسلامی نظام کے اعادہ کے لیے ان شرائط میں من حیث مسلمان یہ ہماری فرد فرد کی ذمہ داری ہےکہ امارت اسلامیہ کی قوت، وحدت، وسعت اور کامیابی کے لیے تمام کوششوں کو بروئے کار لائیں، اس مشترکہ گھر کے بنیادوں کو مزید محکم کریں، کیونکہ ہمارے مسلمان عوام اور مجاہد طبقے کی عزت اور سربلندی کی ضمات صرف اسی صف کی قوت دے سکتی ہے۔

مرحوم عالی قدر امیرالمؤمنین ملا محمد عمر مجاہد رحمۃ اللہ نے امارت اسلامیہ کو ایک عظیم تحریک کے طور پر اس طرح قائم اور جاری رکھا تھا، جس کے پیچھے سالم اور محکم بنیادیں، مخلص اور باتدبیر ساتھی اور منظم تشکیلات چھوڑے ہیں، لہذا مجاہدین اور امت مسلمہ مطمئن رہے کہ اس کاروان کو امارت اسلامیہ کے تمام ذمہ داران اور افراد اللہ تعالی کی نصرت اور مسلمانوں کی حمایت سے عالیقدر امیرالمؤمنین ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ کے ارمانوں کیساتھ منزل مقصود تک پہنچائیں گے۔ ان شاءاللہ تعالی و ماذالک علی اللہ بعزيز

امارت اسلامیہ کی قیادت، رہبری شوری اور عالی قدر امیرالمؤمنین رحمۃاللہ کے خاندانی فیصلے کے مطابق آج سے یعنی 14/شوال المکرم 1436ھ تین دن تک ملک بھر میں علماء کرام، مساجد کے امام، قومی اور جہادی اشخاص، امارت اسلامیہ کے ذمہ داران، مجاہدین اور عوام کی جانب سے مرحوم امیرالمؤمنین ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ کی روح کو ایصال ثواب کی خاطر قرآن کریم کے ختم، فاتحہ خوانی اور دعاؤں کا اہتمام کیا گیا ہے اور اللہ تعالی کی دربار سے مرحوم عالی قدر امیرالمؤمنین اور امارت اسلامیہ کی استحکام اور کامیابی کے لیے دعائيں کی جائیگی۔

آخری میں قابل یاد آوری ہےکہ مرحوم عالی قدر امیرالمؤمین ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ کے بھائی ملا عبدالمنان اور مرحوم کے بڑے صاحبزادے مولوی محمد یعقوب تمام مسلمانوں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مرحوم ملا محمد عمر مجاہد رحمۃاللہ کی قیادت میں امارت اسلامیہ کے دور حکومت کے دوران ان کے جو حقوق تلفی ہوئی ہو، تو سب امیرالمؤمنین رحمۃاللہ کو معاف کریں اور انہیں دعاؤں میں ہمیشہ یاد رکھے، ہم اس عظیم غم میں مسلم امت اور خاص کر افغانستان کے مجاہد عوام کو برابر شریک سمجھتے ہیں اور سب کے لیے اللہ تعالی سے تسلیت اور صبرجمیل کے طلبگار ہیں۔ والسلام

امارت اسلامیہ افغانستان رہبری شوری اور عالی قدر مرحوم ملا محمد عمر مجاہد کا خاندان

14/شوال المکرم 1436ھ

30/ جولائی 2015ء


 ·  Translate
2
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
د اسلامي امارت د نوي امیر د ټاکلو په اړه د اسلامي امارت د رهبري شوری اعلامیه

الحمدلله رب العلمین  والصلوة والسلام علی رسوله  محمد و علی آله وأصحابه  أجمعین و بعد

مسلمانانو وروڼو!

لکه څنګه چې خبر یاست   دافغانستان د اسلامي امارت مؤسس او زعیم عالیقدر امیرالمؤمنین  ملا محمد عمر مجاهد رحمة الله علیه څه موده وړاندې د ورپیښې شوې   ناروغۍ  له امله خپل روح  الله تعالی ته وسپاره او له دې دنیا څخه  یي رحلت وکړ.

د نوموړي له وفات وروسته د اسلامي امارت رهبري شورا او د هیواد جیدو علماء کرامو اومشائخو د زعامت دټاکلو په چاره لاس پورې کړ، د اسلامي امارت د رهبري شوراغړو، مشائخو او علماء کرامو چې داهل الحل والعقد له شرعي اعتبار څخه برخمن و د یوې  غونډې په ترڅ کې یي له اوږدو سلامشورو وروسته د ملامحمد عمر مجاهد نږدې او د اعتماد وړ ملګری او داسلامي امارت پخوانی مرستیال ملا اخترمحمدمنصور  د اسلامي امارت دامیر په حیث وټاکه.

ملااختر محمد منصور چې د مرحوم ملامحمد عمر مجاهد رحمه الله لخوا هم  په خپل ژوند کې  داعتماد وړ او د درانه مسئولیت  د تحمل لپاره وړ کس  بلل شوی وو  او په کلونو  د اسلامي امارت ټولې اجرایوي چارې ورسپارل شوې وې، داسلامي امارت رهبري شورا او علماء کرامو هم نوموړی د راتلونکي لپاره د افغانستان داسلامي امارت د رهبرۍ   لپاره مناسب او مستعد شخص وباله او دشرعي امیر په حیث یي  غوره کړ.

د زعیم  ټاکلو په  غونډه کې د علماء کرامو، مشائخو او اسلامي امارت د مشرانو لخوا له ملااخترمحمد منصور سره د امیرالمؤمنین په حیث علی السمع و الطاعة بیعت ترسره شو او نوموړي هم  د شرعي امیر په حیث، شریعت ته دالتزام  تعهد وکړ.

همدا راز د یادې  غونډې په مشوره او تائيد  هر یو د اسلامي امارت د محاکمو پخوانی عمومي رئیس شیخ الحدیث مولوي هیبت الله  اخندزاده اود مشهورجهادي او علمي شخصیت مولوي جلال الدین حقاني حفظه الله زوی داسلامي امارت پيژندل شوی جهادي قومندان  ملا سراج الدین حقاني د اسلامي امارت د مرستیالانو په حیث وټاکل شول .

د اسلامي امارت رهبر ي شورا د اسلامي امارت دغه تعین شوي زعامت ته دالله تعالی له دربار څخه د استقامت،امانت دارۍ او الهي شریعت ته د وفادارۍ  خواست کوي، او مسلمان ملت په ځانګړي ډول د اسلامي امارت ټول مجاهدین یي د شرعي امیر په حیث اطاعت ته رابولي.

د افغانستان د اسلامي امارت  رهبري شوری

۱۴۳۶ هـ ق کال د شوال المکرم ۱۴مه
۱۳۹۴هـ ش کال د اسد ۸ مه
۲۰۱۵میلادي کال د جولای ۳۰ مه 

1
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
بدخشان حملے پسپا، چوکی فتح، 12 اہلکار ہلاک، اسلحہ غنیمت

صوبہ بدخشان کے  وردوج اور شہداء  اضلاع میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے پولیس چوکیوں پر حملہ کیا، جبکہ دشمن کے حملوں کو اللہ تعالی کی نصرت سے پسپا کردیے۔

تفصیل کے مطابق جمعہ کےروز 2015-07-24 شام کے وقت مجاہدین نے ضلع وردوج کے کوہ سردرگاب اور تیرگران کے علاقوں میں واقع پولیس اہلکاروں کی چوکیوں پر ہلکے و بھاری ہتھیاروں سے وسیع حملہ کیا، جس کے نتیجے میں مجاہدین نے اللہ تعالی کی نصرت سے ایک چوکی پر قبضہ جمالی اور وہاں تعینات اہلکاروں میں سے 12 ہلاک ہوئیں، جن کی لاشیں اطلاع آنے تک وہاں پڑے ہوئے ہیں، اس کے علاوہ مجاہدین نے 12 ہلکے و بھاری ہتھیار اور دیگر فوجی سازوسامان غنیمت کرلیا۔

دوسری جانب مجاہدین نے زیباک اور اشکاشم اضلاع سے آنے والے تازہ دم اہلکاروں کو نشانہ بنایا، تو دشمن نے فرار کی راہ اپنالی۔

ضلع شہداء سے موصولہ رپورٹ میں کہا گیا ہےکہ جمعہ کےروز سہ پہر کے وقت کٹھ پتلی فوجوں نے شیوہ کے علاقے میں مجاہدین پر حملہ کیا،جنہیں شدید مزاحمت کا سامنا ہوا اور دشمن نے نقصانات اٹھاتے ہی فرار کی راہ اپنالی۔

واضح رہے کہ اس سے قبل بہارک اور وردوج اضلاع میں بھی دشمن پر حملے ہوئيں۔

 ·  Translate
5
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
شہرصفا،جنگجو کمانڈر سمیت 5ہلاک، شاہراہ کمانڈر زخمی

مقامی جنگجوؤں پر صوبہ زابل ضلع شہرصفا میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین کی نصب شدہ بموں کے دھماکے  ہوئے۔

آمدہ رپورٹ کے مطابق سنیچر کےروز 2015-07-18 مقامی وقت کے مطابق دن دس بجے کے لگ بھگ اسحق زئی ماندہ کے علاقے میں بم دھماکہ سے کمانڈر کی گاڑی تباہ اور اس میں سوار سفاک، ظالم جنگجو کمانڈر گل محمد سمیت 5 شرپسند موقع پر ہلاک ہوئيں۔

دوسری جانب خواجہ بابا کے علاقے میں شاہراہ کمانڈر عبدالحکیم اسی نوعیت دھماکہ سے تین محافظوں سمیت شدید زخمی ہوا۔


 ·  Translate
3
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...

Alemara News

Shared publicly  - 
 
فاریاب،12 چوکیاں، 42گاؤں فتح، 3کمانڈروں سمیت ہلاکتیں

عزم جہادی آپریشن کے سلسلے میں امارت اسلامیہ کے مجاہدین نے صوبہ فاریاب کے المار اور دولت آباد اضلاع میں کٹھ پتلی فوجوں پر حملہ کیا۔

تفصیل کے مطابق مجاہدین نے چار روز سے ضلع المار کے مختلف علاقوں میں کٹھ پتلی دشمن کے چوکیوں اور مراکز پر ہلکے و بھاری ہتھیاروں سے شدید حملہ کیا،جس کے نتیجے میں دشمن کو بھاری جانی و مالی نقصانات کا سامنا ہوا۔

رپورٹ کے مطابق چار روزہ آپریشن کے دوران تین کمانڈروں غفور، اسرائیل اور خدائے رحیم سیمت 9 اہلکار ہلاک جبکہ 9 زخمی ہونے کے علاوہ مجاہدین نے اللہ تعالی کی نصرت سے 12 چوکیوں اور 42 گاؤں سے دشمن کا مکمل صفایا کروایا ، جن کے نام  درج ذیل ہے۔

تاجک، اولاد شیری، کشبائی، بوزبالا، بوزپایان، قبرغہ، تیگن، دواشی، بوری، ابدلی، بازار قرائے، جنگلی، قشقہ، فیض آباد، بوزتال بالا، بوزتال پایین،پرتلیک، دمبہ خوار، ورتہ قشلاق، یتی وی، دیوانہ یر، دشت صحرا، قلعہ یر، حذرہ قشلاق، کلک، دالان بالا، دالان پایان، اسبغ چشمہ، براتی، آرتوق بالا، آرتوق پایان، حیدرخانہ، صیاد، آقکوتل بالا، آقکوتل پایان، کترش، تیرسلوق، بابایوسف، قوزرا ور دیگر علاقے شامل ہیں۔

رپورٹ کے مطابق قرائے کے علاقے میں مجاہدین نے ایک اینٹی ایئرکرافٹ گن (25صندوق گولیاں) 2 ہیوی مشین گنیں (2 صندوق گولیاں) 2 آرپی جی راکٹ (40 گولے) 4 خفیف گن، 11 کلاشنکوفیں (6000گولیاں) ایک پستول، 3 وائرلیس سیٹیں، چیکنگ کا آلہ، 4 گھوڑے، ایک بم آفگن (12 گولے) ایک شارٹی میزائل، ایک موٹرسائیکل اور دیگر فوجی سازوسامان غنیمت کرلیا۔

ذرائع کے مطابق آپریشن کے دوران ایک مجاہد شہید جبکہ 4 زخمی ہوئیں۔ تقبلہ اللہ

واضح رہے کہ دو روز قبل مجاہدین نے ضلع شیرین تگاب کے آستانہ کے علاقے سے دشمن کو مار بھگایا تھا۔

ضلع دولت آباد سے اطلاع ملی ہےکہ بدھ کےروز 2015-07-15 مقامی وقت کے مطابق صبح نو بجے کے لگ بھگ مجاہدین نے فوجی کاروان پر حملہ کیا، جو دوپہر گیارہ بجے تک جاری رہا، جس  میں ایک فوجی کی ہلاکت کی اطلاع ملی، لیکن مزید تفصیل موصول نہ ہوسکا۔


 ·  Translate
4
1
Syeda Anissa bint Youssef Ibn Yusuf Zaid's profile photo
Add a comment...
People
Have him in circles
109 people
Al Hikmat's profile photo
said vegatecno's profile photo
Wazer Wazer's profile photo
fazaldeen ihsan's profile photo
‫خالدبن ولید آپریشن‬‎'s profile photo
Alkhidmat Sindh's profile photo
Qari Luqman's profile photo
‫باقية رغم الصعاب‬‎'s profile photo
‫عجب خان رحمتي وردگ‬‎'s profile photo
Basic Information
Gender
Male