Profile cover photo
Profile photo
Rehan Ahmed
2,207 followers
2,207 followers
About
Rehan's posts

Post has shared content
زمین اور اہلِ زمین کے درمیان بکھری اچھی باتوں اور عادتوں کو یوں چُنو جیسے پرندے زندگی کے لیے رزق چُنتے ہیں ــــــ
Photo

Post has attachment

Post has shared content
تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو.....
Photo

Post has shared content
Beautiful flowers of the cactus,..............
Photo

Post has shared content
#mehro
دو مسافر

ایک مالک نے اپنے دو نوکروں کو اپنے پاس بلایا اور انہیں بتایا کہ وہ ان کو ایک نہایت مشکل ترین سفر پر روانہ کر رہا ہے۔ سامنے رکھی دو تھیلیوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے مالک نے کہا کہ یہ تمہارا مختصر سا زاد راہ ہے۔ ہر تھیلی میں چند کھجوریں اور ایک بوتل پانی ہے۔ ایک لق دق صحرا سے گزرتے ہوئے تمہیں دور دراز منزل پر پنہچنا ہے جو کہ ایک نہایت خوبصورت باغ ہے۔ راستہ بہت طویل اور کٹھن ہے اور کہیں بھی پانی اور غذا کا بندوبست نہیں ہے۔ اس لیے تمہیں اپنی غذا کو خوب سوچ سمجھ کر خرچ کرنا ہے۔ خاص طور پر پانی کے معاملہ میں تو نہایت محتاط رہنا ہے کہ اگر راستہ میں ختم ہوگیا تو سمجھو کہ پھر ہلاکت اور موت ہے لہٰذا پانی تب ہی استعمال کرنا ہے جب اس کے علاوہ چارہ نہ ہو۔

دونوں مسافروں نے اپنا سفر الگ الگ شروع کیا اور تھوڑی ہی دیر میں لوگوں کی نگاہوں سے اوجھل ہوگئے۔ ملازمین میں سے ایک نے مالک کی ہدایات یاد رکھیں اور خوب سوچ سمجھ کر اپنا پانی استعمال کیا لہٰذا منزل پر پنہچ گیا۔ اب وہ ایک بہت بڑے اور شاندار باغ کی ٹھنڈی چھاؤں تلے بیٹھا مالک کے دیے انواع و اقسام کے پھل فروٹ کھا رہا ہے۔ جبکہ دوسرے نے مالک کی ہدایات کو نظرانداز کیا اور ایک جگہ گندگی میں پاؤں پڑ جانے پر بوتل نکال کر اس کے پانی سے اپنا پاؤں دھو ڈالا۔ لہٰذا وہ اپنی منزل پر پنہچنے کے بجائے راستہ ہی میں پیاس کی وجہ سے مر گیا۔ صحرا میں چلتی تیز طوفانی ہواؤں نے تھوڑی ہی دیر میں اس کی لاش کو ریت کی ایسی چادر پہنائی کہ گویا کہ وہاں کوئی تھا ہی نہیں۔

یہ ایک تمثیل ہے دنیا کی زندگی کے بارے میں۔ جس کو آپ ایک صحرا سے تشبیہ دے سکتے ہیں۔ مالک نے انسان کو یہاں بہت مختصر وقت اور نہایت قلیل توشے کے ساتھ بھیجا ہے اس لیے نہیں کہ وہ اس مختصر سے زاد راہ کو محض عیش کوشی اور لطف کے لیے خرچ کرے بلکہ اس لیے کہ اس کے ذریعہ وہ ایک دائمی اور مستقل زندگی کا سازوسامان خریدے۔ کچھ نوکر مالک کا حکم بھول گئے اور ایک بوتل پانی کو، جو کہ ان کی اپنی بقا کے لیے ناگزیر تھا، اپنے اپنے پاؤں دھونے میں ضایع کر رہے ہیں جب کہ کچھ نوکر مالک کی دی گئی ہدایات پر چلتے ہوئے اپنی منزل کی طرف بخیریت رواں دواں ہیں۔

Post has shared content
ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺑﮯﺑﮯ ﻧﮯ ﺑﯿﺴﻦ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﭘﮑﺎ ﮐﮯ ﺩﯼ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﻭ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﺴّﯽ ﭘﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﺑﮯﺑﮯ ﮐﻮ ﺧﻮﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺯﻭﺭﺩﺍﺭ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺷﮑﺮ ﺍﺩﺍ ﮐﯿﺎ۔ﺑﮯﺑﮯ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ :
" ﺍﮮ ﮐﯽ ﮐﯿﺘﺎ ﮬﯽ؟ "
،
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ :"
ﺑﮯﺑﮯ ﺷﮑﺮ ﺍﺩﺍ ﮐﯿﺘﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﺩﺍ "
ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯽ :"
ﭘُﺘﺮﺍ ! ﯾﮧ ﮐﯿﺴﺎ ﺷﮑﺮ ﮬﮯ؟
ﺩﻭ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﺠﮭﮯ ﺩﯼ، ﺗُﻮ ﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﻧﮧ ﺗُﻮ ﺑﺎﮬﺮ ﺟﮭﺎﻧﮑﺎ، ﻧﮧ ﭘﺎﺱ ﭘﮍﻭﺱ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻟﯽ ﮐﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﻮﮐﺎ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﯾﺴﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺷﮑﺮ؟ ﭘُﺘﺮﺍ ! ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮭﺎ ﮐﮯ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﻭﺍﻻ ﺷﮑﺮ ﺗﻮ ﺳﺐ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ، ﺍﭘﻨﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺎﻧﭧ ﮐﺮ ﺷﮑﺮ ﻧﺼﯿﺐ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﺮﺗﮯ ﮬﯿﮟ۔
ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﺵ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ ! ﻋﻤﻞ ﭘﮑﮍ ﭘُﺘﺮ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺟﺲ ﭼﯿﺰ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯ ﺩﮮ، ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮ ! ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺎﻧﭧ ﻟﯿﺎ ﮐﺮ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻋﻤﻠﯽ ﺷﮑﺮ ﮬﮯ۔
،
‏( ﺍﺷﻔﺎﻕ ﺍﺣﻤﺪ ‏)

Post has shared content
مصرعہ مل گیا ۔۔۔۔۔۔
Posted on 11 April 2014 at 06:11


ہم طالب شہرت ہیں ہمیں ننگ سے کیا کام

بدنام اگر ہوں گے تو کیا نام نہ ہوگا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

خط ان کا بہت خوب'عبارت بہت اچھی

اللہ کر ےزورِقلم اور زیادہ

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

نزاکت بن نہیں سکتی حسینوں کے بنانے سے

خدا جب حسن دیتا ہے نزاکت آ ہی جاتی ہے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

یہ راز تو کوئی راز نہیں ،سب اہلِ گلستان جانتے ہیں

ہر شاخ پہ اُلو بیٹھا ہے انجامِ گلستاں کیا ہوگا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

داورِ محشر میرے نامہ اعمال نہ کھول

اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

میں کس کے ہاتھ پر اپنا لہو تلاش کروں

تمام شہر نے پہنے ہوئے ہیں دستانے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ہم کو معلوم ہے جنت کی حقیقت لیکن

دل کےخوش رکھنے کو غالب یہ خیال اچھا ہے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

قیس جنگل میں اکیلا ہے مجھے جانے دو

خوب گزرے گی جب مل بیٹھیں گے دیوانے دو

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

غم و غصہ و رنج و اندوں و حرما ں

ہمارے بھی ہیں مہرباں کیسے کیسے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

مریضِ عشق پہ رحمت خدا کی

مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

آخرگِل اپنی صرفِ میکدہ ہوئی

پہنچی وہیں پہ خاک جہاں کا خمیر تھا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

بہت جی جوش ہواحالی سے مل کر

ابھی کچھ لوگ باقی ہیں اِس جہاں میں

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

نہ جانا کہ دنیا سے جاتا ہے کوئی

بڑی دیر کی مہرباں آتے آتے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

نہ گورِسکندر نہ ہی قبرِ داراں

مٹے نامیوں کے نشاں کیسے کیسے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

غیروں سے کہا تم نے، غیروں سے سنا تم نے

کچھ ہم سے کہا ہوتا کچھ ہم سے سنا ہوتا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

جذبِ شوق سلامت ہے تو انشاءاللہ

کچھے دھاگے سے چلیں آئیں گے سرکار بندھے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

قریب ہے یارو روزِمحشر، چھپے گا کشتوں کا خون کیونکر

جو چپ رہے گی زبانِ خنجر، لہو پکارے گا آستین کا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

پھول تو دو دن بہارِجاں فزاں کھلا گئے

حسرت اُن غنچوں پہ ہے جو بن کھلے مرجھا گئے

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

کی میرے قتل کے بعد اُس نے جفا سے توبہ

ہائے اُس زود پشیماں کا پشیماں ہونا

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

خوب پردہ ہے چلمن سے لگے بیٹھ ہیں

صاف چھپتے بھی نہیں ،سامنے آتے بھی نہیں

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

اس سادگی پہ کون نہ مرجائے اے خدا

لڑتے بھی ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

چل ساتھ کہ حسرت دلِ مرحوم سے نکلے

عاشق کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے

http://www.bitlanders.com/blogs/193720/193720

Post has attachment
کیا کہانی ختم ہونے والی ہے ..
PhotoPhotoPhotoPhoto
10/31/16
4 Photos - View album

Post has shared content

Post has shared content
ایک سال پہلے لکھا گیا مضمون آج بھی ایسا ہے جیسے کل کی بات ہو۔

ایک ساد سا پیغام ۔
شاید کہ اتر جائے تیرے دل میں میری بات

سرمایہ کاری بمقابلہ خرکاری

مت سنائیے مجھے کسی ایسے ملک کی امارت اور دولت کے قصے اور جس کے شہری حسد، کوڑھ، جلن، سڑاپے، علاقائی، مسلکی، قبائلی اور ذات پات کی بیماریوں میں الجھے باہم دست و گریبان جاہل لوگ ہوں۔

نائجیریا: معدنیات کے زیر زمین انبار اور خام تیل کے ذخائر سے ایسا مالا مال گویا دنیا کے امیر ترین ملکوں میں سے ایک ملک ہو۔

مگر اس کی عوام کی دگرگوں حالت اور اس حالت کے اسباب پر ایک نظر ڈال کر دیکھ لو؛ وہی کچھ؛ نسل و اصل کا غرور اور ایک دوسر ے پر نیزے بھالے سونتے ہوئے۔

سنگاپور بھی تو ہے، جس کا سربراہ ایک بار رو پڑا کہ ان کے پاس پینے کا پانی نہیں ہے۔

آج یہی سنگاپور ہی ہے ناں، جس کی فی کس آمدن جاپانی شہری کی فی کس آمدنی سے مقابلہ کر رہی ہے۔

ہم جس زمانے میں رہ رہے ہیں، اسی زمانے میں ہی، بہت سارے ایسی قومیں بھی رہ بس رہی ہیں جو بس اسی انتظار میں ہیں کہ زمین کب کچھ اپنے پیٹ سے اگلے اور ان کا نظام حیات چلے۔

جبکہ سچ ہے یہ کہ آج کے وقت میں انسان بذات خود سب سے بڑا سرمایہ کاری کا عنصر بن چکا ہے۔

سمجھاتا ہوں:

کبھی گلیکسی یا آئیفون خریدتے ہوئے لمحے بھر کیلئے بھی، آپ کے دل میں یہ خیال آیا ہے کہ اس سیٹ پر کتنی معدنیات خرچ ہوئی ہیں؟

(چند تولے لوہا، چند ماشے شیشہ اور تھوڑی سی پلاسٹک - ایسا ہی ہے ناں؟)

لیکن اسے خریدنے کیلئے سیکڑوں ڈالر دینا پڑتے ہیں، اتنے سارے ڈالر کہ اُن سے دس بارہ تیل کے بیرل بآسانی خرید کیئے جا سکیں۔ ہے ناں!

وجہ کچھ اور نہیں ہے، بس اتنی سی کہ اس میں، ٹیکنیکل دولت ڈالی ہوئی ہے جسے انسانی ذہن نے بنایا ہے۔

کیا آپ جانتے ہیں کہ محض ایک انسان (بر سبیل مثال 'بل گیٹس')؛ مایکروسافٹ کا بنانے والا، فی سیکنڈ 226 ڈالر کماتا ہے؟ یعنی کہ ہمارے ملک یا پھر یمن اور عرب امارات کی ریاستوں کی جمع شدہ احتیاطی دولت سے زیادہ جمع پیسے رکھنے والے شخص کی کمائی محض ہمارے کمپیوٹر کو چلانے والے ایک پروگرام سے ہو رہی ہے!

کیا آپ جانتے ہیں کہ اس وقت کے دولتمند ترین لوگ سونے اور ہیروں کی کانوں کے مالک یا تیل کے کنووں کے مالک لوگ نہیں بلکہ اپ کے موبائل فون میں ڈالی ہوئی آسان سی اپلیکیشنز کے بنانے والے لوگ ہیں؟

کیا آپ جانتے ہیں کہ سامسونگ کا سالانہ منافع 327 ارب ڈالر ہے جسے کمانے کیلئے صدیاں بھی ناکافی ہیں؟

پیارے سندھی، پنجابی، بلوچی اور سرحدی صاحب: آپ کے پاس بھی کسی بڑے رقبے، جائیداد اور تیل کے کنویں کی ملکیت رکھے بغیر بھی سرمایہ کاری کیلئے ایک بہت بڑی ایسی دولت موجود ہے جسے استعمال کرنا بس عقل استعمال کرنا ہی ہے۔

ہاں یہ دولت خر دماغوں میں نہیں ہے۔ جاتے جاتے ایک مثال اور دیتا جاؤں؟

دوسری جنگ عظیم میں جاپان کو شکست فاش ہوئی۔
محض پچاس سالوں میں اس نے اپنی ٹیکنیک سے پوری دنیا سے بدلہ لے لیا۔

اور اڑسٹھ سالوں کے بعد بھی ہمارے لوگ؛ ابھی بھی یہ جاننا چاہتے ہیں کہ یہ جو بڑے بڑے کام کر رہا ہے اس کی ذات کیا ہے؟ اس کا قبیلہ، برادری، آگا پیچھا کیا ہے۔ اور اچھا؛ اگر ہے بڑے قبیلے سے تو اس کا اپنے قبیلے اور اپنی قوم میں کیا مقام ہے، کوئی رتبہ، کوئی حیثیت، کوئی جاگیر، کوئی زمین یا پھر بس نام ہی بڑا ہے اس کا؟

(یہ مضمون 'رای السعودی' نامی اخبار میں 'أبو فرويد الصالح' نامی شخص کے لکھے ہوئے مضمون 'بين الاستثمار و الاستحمار' کا میرے الفاظ میں چربہ ہے، جلدی میں لکھے ہونے کی وجہ سے شاید کہیں کہیں گرفت کمزور ہے تاہم مطلب اور پیغام واضح ہے)
Wait while more posts are being loaded